اسلام حقیقت میں عورتوں کے بارے میں کیا کہتا ہےجمال بدوی کے کتابچے سے تنقیدی مضمون۔ اسلام میں جنس کی مُنصفی :

حصہ اؤل:

خواتین کمتری

عورتوں اور بیویوں کے متعلق بھلی چیزیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔2

اسلم میں خواتین کمتر ہیں بمقابلہ بدوی دعویٰ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔2

مسلمان معاشرے میں خوتین کیسے کمتر ہیں؟ ایک مسلمان طور طریقے بناتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔2

وراثت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔3

خوتین اور جائیداد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔3

کئی اوقات میں عورتوں کو نماز پڑھنا منع ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔3

خواتین ذہنی طور پر برابر نہیں ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔3

خواتین اسلامی شریعت کی نظر میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔4

خواتین ملازمت میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔4

خواتین اور قیادت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔4

خواتین میں سے کوئی نبی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔4

کوئی عورت عوام کی حکمران نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔5

اسلام میں بیویوں کا کردار۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔5

ایک بیوی کو اپنے خاوند کی ضرورت ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔5

طلاق کے معاملے میں عورتوں پر زیادہ پابندیاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔6

عارضی شادی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔6

مستحلل / محلیل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔6

کثیر ازدواجی ، شادی اور طلاق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔8

طلاق میں رویہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔8

شادی کے لیے رضا مندی ضروری لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔9

غلام لڑکیاں اور اسلام میں قیدیوں کے ساتھ جنسی خواہش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔9

قیدیوں کے ساتھ جنسی خواہش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔9

شادی کے علاوہ غلام لڑکیوں سے جنسی خوایش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔10

جب ایک غلام لڑکی سے جنسی خواہش ٹھیک نہ ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔11

قرآن میں بیویوں کے علاوہ شریکِ کار / رفیق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔12

غیر مسلم جنسی غلام ٹھیک ہوسکتے ہیں لیکن غیر مسلم بیویاں بری ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔12

اسلام میں خواتین کی مار پِیٹ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔12

بیویوں کی مار پِیٹ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔12

خواتین کو عام تھپڑ مارنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔15

حجاب / برقعے اور جزوی علیحدگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔16

حجاب / برقعے لازمی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔16

برقعوں کی اہمیت۔۔ غیر حجاب خواتین سے ٹکراؤ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔17

عورتیں گھروں میں تنہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔17

دوسرے شریعتی جنسی اصولات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔18

عورتیں جنت اور دوزض میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔18

حوراں (جنتی کنواریاں)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔18

دوزخ میں خواتین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔19

قرآن کے ترجمے کی درستی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔19

مقابلہ بائبل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔20

خلاصہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔20

متبادل۔۔۔۔۔۔ سچے خدا کو ڈھونڈیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔20

حوالاجات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔20

ڈاکڑ جمال بدوی اسلام اور مسیحیت پر کم از کم 176 مختلف بنائی ہوئی تحریرات کے لیے ایک مشہور مناظرادان (حمایتی) ہے اس نے 59 صفحات پر ایک کتا بلکھی جس میں اسلام کی عورتوں کے متعلق ہی گئی اچھی باتوں کے منتخب اقتباسات کا اظہار ہے ریکارڈ کو باہم سیدھا ہونے کی ضرورت ہے کہ سچائی ہو دیکھیں کہ اسلام ڈرحقیقت عورتوں کے بارے کیا کہتا ہے۔ ڈاکڑ بدوی چند غلط باتیں کہتا ہے لیکن وہ کچھ بہت سنجیدہ اور اہم پہلو سامعین کو بتانے میں ناکام ہے۔ ان سب پر بحث کرنے سے پہلے، آؤ مختصراً دیکھیں کہ جمال بدوی کن چیزوں کو درست کہتا ہے۔ ڈاکٹر بدوی شروع میں صفحہ 1 پر بڑی بے تکلفی سے اپنے آپ کو متعدد اسلامی ثقافتی طریقہ کار سے دور رکھتا ہے۔ وہ قرآن اور حدیث کی تعلیم میں نہیں ہے یا حتی کہ وہ صحیح تعلیم سے اختلاف رکھتی ہیں گھر میں عورتوں کو مکمل الگ تھلگ رہنا،خواتین کا ختنہ ، عارضی شادی کے لیے کسبیوں کو بلانا اور دوسرے کام مسلمان دنیا میں بہت برے ہیں۔ لیکن ہم ڈاکٹر بدوی کا انکار کرتے ہوئے غلطی دیکھتے ہوئے ان کاموں سے نا اتفاقی پر دفاع کے لیے جو محمد نے اصل میں سکھائے تاہم اس کے لیے وقت ہے کہ اپنا دفاع کرے۔ پس پھر ہم اسلام کسے کہہ رہے ہیں ۔ اسلام کے متعلق بہت سی مختلف تجاویز ہیں۔ آزاد خیال مسلمانوں کے لیے، علویوں کے لیے، شیعوں کے لیے، صوفیوں کے لیے اور دوسرے صرف ڈاکٹر بدوی دفاع کر رہا ہے کہ قرآن اور حدیث میں موجود اسلام محمد کا ہے وہ صفحہ 3 پر کہتا ہے کہ اسلامی تعلیمات کا قرآن کے لیے ثانوی، بنیادی ذریعہ مستند سنت ہے۔ وہ صفحہ 47 پر کہتا ہے "ایک اور عام اصطلاح، جو کچھ با اختیار خیال کرتی ہیں کہ سنت کے برابر احادیث ہیں۔ جن کا لفظی معنی ہے "فرمودات"۔ بدوی نے احادیث کی اہمیت کے لیے ایک واضح مثال دی ہے کہ ہم زیر غور نہیں لاتے۔ قرآن کہتا ہے کہ مسلمانوں کو نماز پڑھنی چاہیے لیکن تفصیلات کے ساتھ نہیں۔ یہ احادیث ہیں کہ جو سینکڑوں صفحوں پر ہدایات دیتی ہیں کہ کس وقت کیسے وغیرہ وغیرہ نماز پڑھی جائے۔ پس ڈاکٹر بدوی اپنے دلائل کے لیے قرآن اور مستند احادیث کو بنیاد بناتا ہے۔ کچھ چیزیں الطبری اور دسرے ذرائع سے لیتا ہے۔ اگر آپ مانتے ہیں کہ احادیث عام طور پر صحیح تعلیمات ہیں۔ تو ڈاکٹر بدوی کا چناؤ مکمل طور پرقابل فہم ہے۔ دوسری چیزوں میں بدوی اقتباسات دیتا ہے کہ عورتیں اور مرد روحانی نہیں دونوں کا فطرتی وقار ہے۔ خواتین کا جائیداد میں حقوق ہیں اور ورثہ لے سکتی ہیں۔ اگرچہ صرف ادھا حصہ۔ بدوی عام طور پر صفحہ 145 پر لوگوں پر زور دے کر کہتا ہے ثقافتی بات کہ مثال اجازت نہ دیں کہ جس سے مرد یا عورتوں کو اسلامی ممالک میں ثقافتی بہانہ بنا کر دبایا جا رہا ہے یہ ایک غیر اسلامی بات ہے۔

عورتوں اور بیویوں کے متعلق بھلی باتیں

 

بدوی کے کتابچے سے یہ تاثر ملتا ہے کہ اسلام عورتوں کے متعلق صرف بھلی باتیں کہتا ہےجبکہ یہ غلط ہے۔ اسلام عورتوں اور بیویوں کے بارے میں کچھ بھلی باتیں کہتا ہےان میں سے کچھ یہاں بیان کی گئی ہیں۔ ابو ہریرہ کا بیان ہےاللہ کے رسول نے کہا، عورتوں سے بھلا سلوک کرو، کیونکہ عورت پسلی سے پیدا کی گئی ہے اور اس کا اوپر والا حصہ سب سے خمدار ہوتا ہے۔ اگر آپ اسے سیدھا کرنے کی کوشش کرنا چاہیں تو یہ ٹوٹ جائیگی۔ لیکن اگر ہم اسے اسی طرح چھوڑ دیں تو خمدار رہے گی۔ پس عورتوں سے بھلا سلوک کرو۔ بخاری جلد 4 عدد 548 صفحہ 346۔ ابوہریرہ سے روایت ہے، عورت پسلی سے پیدا کی گئی ہے۔ اور اسے سیدھا کرنے کے لیے آپ کے پاس کوئی طریقہ نہیں۔پس اگر تم اس سے فائدہ لینا چاہتے ہو اس سے فائدہ یہی ہے کہ اسکے خم کو رہنے دیں۔ اور اگر آپ اسے سیدھا کرنے کی کوشش کریں ، تم اس توڑ دو گے۔ اور اسے توڑنا، طلاق دینا ہے۔ صحیح مسلم جلد 2 کتاب 8 عدد 3368-3466 صفحہ 752-753 اور بخاری جلد 7 کتاب 62 عدد 113 صفحہ 80۔ محمد نے ایک تقریر میں کہا۔ یہ عقلمندی نہیں، کہ تم میں سے کوئی اپنی بیوی کو غلاموں کی طرح کوڑے مارے۔ ظاہراً یہ بہت سخت رویہ ہے کیونکہ وہ تمہاری بیوی ہے کوئی غلام نہیں۔ بخاری جلد 6 کتاب 60 درس نمبر 335 عدد 466 صفحہ نمبر 440، بخاری جلد نمبر 7 کتاب 62 درس 94 عدد 132 صفحہ 100-101 بھی دیکھیے۔ اسی طرح ابن ماجہ جلد 3 عدد 1983 صفحہ 194 کہتی ہے کہ ایک خطبہ میں محمد نے مسلمان مردوں پر تنقید کی جو اپنی بیویوں کو ایسے مارتے تھے جیسے اپنی غلام لڑکیوں کو مارتے ہیں۔ غلام لڑکی بننا ایک بمر ہو سکتا تھا۔ اسکے مقابلہ میں بائبل گلتیوں28:3 میں کہتی ہے کہ مسیح میں نہ کوئی مرد اور نہ عورت۔ جبکہ کچھ قدیم تہذیبوں میں بیٹیوں سے بیٹوں کو ترجیح دی جاتی ہو۔ لیکن گلتیوں28:3 خاص طور پر کہتی ہے دونوں عورت اور مرد ایماندار مسیح یسوع میں بیٹے (فرزند) ہیں۔

عورتیں اسلام میں کمتر ہیں بمقابلہ بدوی کے دعوےٰ

بدوی دعویٰ کرتا ہے کہ عورتیں اسلام میں انصاف رکھتی ہیں۔ مطلب یہ کہ مردوں کی طرف سے کوئی کمتری کا رویہ نہیں لیکن مختلف کردار ہیں۔ تاہم حقیقت یہ ہے کہ اکثر اسلامی علماء اس سے اختلاف نہیں کرتے کہ دونوں کی روحانی زندگی اور انسانی وقار کی قدر ہے، جو کہتے ہیں کہ قرآن اور احادیث، کئی لحاظ سے بدوی کے دعوں کی مخالفت کرتے ہیں۔ یہاں عام خواتیں کے بارے میں محمد نے کیا کہا" ایک غلام اپنے مالک کی جائیداد کا محافظ ہے اور بیوی اپنے خاوند کے گھر اور بچوں کی محافظ ہوتی ہے۔ ابو داود جلد نمبر 2 عدد 2922 صفحہ 827۔

مسلمان معاشرے میں کیسے خواتین کمتر ہیں؟ مسلمانوں کے اپنے طریقے ہیں

اے عورتو! زکواۃ دو، جیسے میں دیکھ چکا ہوں کہ جہنم کی آگ میں مکینوں کی اکثریت تمہاری (عورتوں) کی تھی۔ اے اللہ کے رسول اس طرح کیوں ہے؟ اس نے جواب دیا، تم اکثر پھٹکار کرتی ہو اور اپنے خاوندوں کی شکرگزار نہیں ہوتیں۔ میں نے تمہاری نسبت ذہنی طور پر اور مذہب میں اتنا گھٹیا نہٰیں دیکھا۔ عورتوں نے پوچھا اے اللہ کے رسول! ہمارے ذہن اور مذہب میں کیا گھٹیا چیز ہے؟ اس نے کہا، کیا یہ ثبوت نہیں کہ ایک مرد کی گواہی دو عورتوں کی گواہی کے برابر ہے۔ انہوں نے تصدیقی جواب دیا۔ اس نے کہا یہ ہے کہ تمہارے ذہن میں ادھورا پن، کیا یہ سچ نہیں کہ ایک عورت اپنے حیض کے دوران نہ تو نماز پڑھ سکتی ہےاور نہ ہی روزہ رکھ سکتی ہے۔ عورتوں نے تصدیقی جواب دیا۔ اس نے کہا یہ ہے آپ کے مذہب میں ادھورا پن۔ بخاری والیم 1 عدد 301 صفحہ 181۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 4 عدد 982-983 صفحہ 432 بھی دیکھیں۔ اسلامی ثقافت کے عروج کے دوران ایک مسلمان عالم الغرالی (1111،1058DA) نے 18 نکات پر مشتمل ایک فہرست بنائی، کہ اسلام میں عورتیں مردوں کی نسبت کمتر ہیں۔ یہاں ان میں سے 9 ہیں جو مذہب اور ثقافت کو بیان کرتی ہیں۔

وراثت میں کمتر۔ طلاق میں ذمہ داری اور طلاق میں غیر ذمہ داری مرد زیادہ بیویاں رکھ سکتا ہے لیکن ایک عورت صرف ایک خاوند رکھ سکتی ہے۔ عورت کو گھر میں تنہا رہنا چاہیے عورت کو گھر میں اپنا سر ڈھانپنا چاہیے۔ عدالت میں گواہی مرد کی نسبت آدھی شمار کی جاتی ہے۔ ایک عورت اپنے فریبی رشتے دار ساتھ کے سوا گھر نہیں چھوڑ سکتی۔ صرف مرد ہی، جمعہ کی نماز اور عید کی نماز اور نماز جنازہ میں شامل ہو سکتے ہیں۔ ایک عورت حکمران یا منصف (جج) نہیں ہو سکتی۔ دیکھیے "میں ایک مسلمان کیوں نہیں" صفحہ 300 ان تمام 18 طریقوں کے بارے میں۔ ڈاکٹر بدوی مسلمان عالم الغرالی کے ان نکات میں سے کئی پر بحث کرتا ہے ۔ ہم ان نکات میں سے کچھ ہر غور کریں گے اور ڈاکٹر بدوی کے خیال کو پرکھیں گے۔ عائشہ سے روایت ہے کیا تم ہمیں (عورتیں) کتوں اور گدھوں کے برابر جانتے ہو؟ جبکہ میں نے اپنے بستر میں جھوٹ بولا کرتی تھی۔ پیغمبر (محمد) آئے اور بستر کے درمیان نماز ادا کرتے رہے۔ میں خیال کیا کرتیہ تھی کہ یہ ٹھیک نہیں کہ اسکی نماز میں اسکے آگے کھڑا ہونا۔ پس میں آہستگی اور خاموشی سے کھسک جاتی ۔ اور بستر سے دور چلی جاتی، یہاں تک کہ میں اپنی غلطی سے باہر آتی۔ بخاری والیم 2 عدد 486 صفحہ 289۔ اس بیان کا تجزیہ کریں۔ عائشہ نے شاید اسلیے کہا ہوکیونکہ محمد نے اسے سکھایا تھا کہ عورت یا کتا سامنے سے گزر جائے تو نماز باطل ہو جاتی ہے۔ اس بارے کچھ نہیں کہا جاتا کہ اگر کوئی مرد نماز پڑھتی عورت کے اگے سے گزر جائے تو اس عورت کی نماز باطل ہو جاتی ہے۔ ایک کالا کتا یا ایک عورت یا کتا اور حیض والی عورت سے نماز خراب ہو جاتی ہے۔ ابوداود والیم 1 عدد 720-703 صفحہ 181، ابن ماجہ والیم 2 عدد 43-53 صفحہ 78-80۔

وراثت

راسخ الاعتقاد اسلام میں صرف بیٹیاں اپنے بھائیوں سے جائیداد سے آدھا حصہ حاصل کرتی ہیں۔ سورۃ11:4 کہتی ہے "اللہ تمہیں ہدایت کرتا ہے تمہارے نر بچوں کے لحاظ سے دو بیٹیوں کے برابر ایک بچہ ہے۔ یوسف علی کا ترجمہ صفحہ 209 ڈاکٹر بدوی صفحہ 17 پر یہ تسلیم کرتا ہے، لیکن عورتیں جائیداد میں کم وراثت رکھتی ہیں کی وجہ بیان کرتا ہے کیونکہ آدمیوں کے کندھوں پر روزی کمانے کے لیے زیادہ بوجھ ہوتا ہے۔ حقیقتاً اگرچہ، عورتیں وراثت میں حصہ دور ہیں۔ جیسا کہ مرد زیادہ رکھتے ہیں، بمقابلہ ان کے کوئی مشکل نہیں۔ دیکھیں صرف آدھا ہی ہے پاکستان ،شام اور مصر کسی چیز میں عورتوں کو وراثت میں اجازت نہیں دیتے بمطابق وائسز بی ہائنڈدی ویل صفحہ 131۔ تاہم یہ قرآن کے خلاف ہے جو کہتا ہے کہ مردوں کی نسبت ان کو (عورتوں ) آدھا حصہ ملنا چاہیے۔ اس کے مقابلے میں، محمد سے پہلے، پرانے عہد نامے میں لڑکیوں کو لڑکوں کے ساتھ برابر کی زمین دی جاتی تھی۔ صلافحاد کی بیٹیوں کو گنتی 27:7-8 میں وراثت ملی۔ صرف عورتوں کی وراثت پر پابندی، ان وقتوں میں یہ تھی، چونکہ زمین قبائل میں رہتی تھی۔ گنتی 36: 8 کہتی ہے کہ بیٹیاں جن کو وراثت ملے، قبائل میں ہی شادیاں ہوں۔ نئے عہد نامے میں پطرس 1:3-4 میں تمام ایمانداروں (مرد و عورت) وراثت کا حصہ، آسمان میں وراثت ہے۔

خواتین اور جائیداد

جب ایک کسی عورت کونوکر یا مویشی دیا جائے، تو وہ اسکی پیشانی پکڑے اور اللہ سے دعا کرے۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 1918 صفحہ 157 یحییٰ کا بیان ہے مالک سے سیعد بن اسلم سے بیان ہے کہ اللہ کے رسول نے کہا "جب تم کسی عورت سے شادی کرو یا کوئی غلام لڑکی خریدو، تو اسکی پیشانی کے بال پکڑو اور کہو برکت۔ جب تم ایک اونٹ خریدو، تو اسکی کوہاں کو پکڑو اور اللہ سے دعا مانگو کہ وہ تمہیں شیطان سے پناہ دے۔ موتاہ مالک 52۔25۔28 عورتوں سے اچھا سلوک کرو، کیونکہ وہ تمہارے ساتھ پالتو جانوروں کی طرح نہیں اور کوئی چیز ان کے نام نہ کرو۔ الطبری والیم 9 صفحہ 113 غور کرو کہ اکثر مسلمان عالم الطبری کے اس نقطے پر متفق نہیں ہیں۔

خواتین کو کچھ اوقات میں نماز پڑھنا منع ہے۔

خواتین کو ان کی ماہواری کے دوران نماز پڑھنا منع ہے۔ صحیح مسلم والیم 1 کتاب 3 عدد 652 صفحہ 188-189 ،والیم 2 کتاب 4 عدد 1932-1934 ۔ اور فٹ نوٹ 1163 صفحہ 418-419 بخاری والیم 1 کتاب 6 عدد 322 صفحہ 194، والیم 1 کتاب 6 عدد 327 صفحہ 196، والیم 3 کتاب 31 سبق 41 صفحہ 98، والیم 3 کتاب 31 عدد 172 صفحہ 98، سنان سائی صفحہ 285-286 ابوداود والیم 3 عدد 4662 صفحہ 1312 مورتامالک 2۔29۔102-103۔ مثال کے طور پر دیکھیں۔ مسیحیوں اور یہودیوں کی ایک غلط چابی ہے احادیث کے مطابق یہ ہے کہ وہ غلط وقت نماز پڑھتے ہیں۔ حیض کے دوران ایک عورت کو قرآن کی تلاوت کرنے کی اجازت نہیں۔ ابو داود والیم 1 حاشیہ 111 صفحہ 56۔ دعا پر نئے عہد نامے میں بھی ایک اصول ہے (اگر تم اسے پکار سکتے ہو ایک اصول ہے) تمام ایماندار ، مرد خواتین بغیر کسی رکاوٹ کے دعا کرتے ہیں۔ 1تھسلنکیوں 5باب 17-18 آیات۔ افیسوں 6 باب 18 آیت۔

خواتین ذہنی طور پر برابر نہیں

مسلم شریعت کے مطابق، ایک عورت کی گواہی، ایک آدمی کی نسبت آدھی ہے۔ عورت کے ذہن کے ناقص ہونے کی وجہ سے بخاری والیم 3 عدد 826 صفحہ 502۔ محمد نے کہا کہ وہ قوم کبھی کامیاب نہیں ہو گی جس کی حکمران ایک عورت بنے گی۔ بخاری والیم 9 عدد 219 صفحہ 170-171۔ حوا، ابتدا میں ذہین تھی، لیکن اللہ نے (آدم کے سوا) اسے گناہ میں گرنے کے بعد احمق بنا دیا۔ الطبری والیم 1 صفحہ 280-281۔ ترسیل کا ایک سلسلہ متنازعہ ہے اگر اس میں عورت شامل کرلی جائے ابن ماجہ والیم 5 عدد 3863 صفحہ 227۔ حدیث کی ترسیل مرد کی طرح عورت کی ٹھیک نہیں۔ سنان سائی والیم 1 صفحہ 84 بد ترین چیز یہ ہے کہ مسلمان مصنفین عورتوں کے بارے میں تعصب رکھنے والے مرد خیال کیے جاتے ہیں یہ کہتے ہوئے بد نیت ہیں کہ عورتوں کے ذہن ناقص ہوتے ہیں۔ حقیقتاً افسوس ناک چیز یہ ہے کہ ایک پاکستانی پڑھی لکھی اعلٰی نوکری، مجھے وضاحت کرنے کی کوشش کرتی تھی کہ یہ کیوں سچ ہے۔ گلتیوں 3باب 28 آیت۔ یہاں نہ کوئی یہودی رہا نہ یونانی، نہ کوئی غلام رہا نہ آزاد، نہ کوئی مرد رہا نہ عورت تم مسیح یسوع میں سب ایک ہو۔

عورتیں اسلامی شریعت کی نظر میں

ابو سعید الخدری کا بیان ہے نبی نے کہا "کیا ایک مرد کی نسبت عورت کی گواہی آدھی نہیں ہے؟ عورتوں نے کہا ہاں۔ آپ نے کہا یہ عورت کے ناقص ذہن کی وجہ سے ہے۔ بخاری والیم 3 عدد 826 صفحہ 502۔ قرآن سورۃ2:282 کہتا ہے۔ اور تم آپ اپنے آدمیوں کی دو گواہیاں لینا۔اور اگر دو آدمی نہ ہوں تو ایک آدمی اور دو عورتیں لے لینا جیسی آپ چاہیں چن لینا۔ گواہی کے لیے اگر ایک غلطی کرے تو دوسری اے یاد کروائے۔ ڈاکٹر بدوی صفحہ 34-35 پر اس کو تسلیم کرتا ہے۔لیکن وہ سورۃ 24: 6-9 کا حوالہ بھی دیتا ہے جو خاوند اور بیوی دونوں بے دینی کے الزام میں برابر ہیں۔ ڈاکٹر بدوی کہتا ہے کہ سورۃ2 : 282 کا اطلاق صرف کاروباری معاملے پر ہوتا ہے اور سورۃ 4:6-9 کا اطلاق ہر چیز پر ہوتا ہے۔ تاہم یہ تمام دوسرے مسلمان علماء کے لیے معقول ہو گی۔ یہ کہنا کہ سورۃ 24: 6-9 کا اطلاق صرف بے دینی کے معاملوں میں ہوتا ہے۔ اور سورۃ 2: 282 کا اطلاق ہر چیز پر ہوتا ہے۔ بدوی کے ناول کی تفسیر کے قطع نظر، تمام کو متفق ہونا چاہیے کہ مسلمان کی بڑی اکثریت جو شریعت پر عمل کرتے ہوئے، یہاں وہی تفسیر استعمال کرتے ہیں۔

1) اللہ اپنے خیالات کو منتقل کرنے میںناکام جو اس نے ارادہ کیا تھا۔

2)بدوی ٹھیک کہتا ہے اور مسلمانوں کی اکثر رائے اللہ کی خواہشات کو سمجھنے سے قاصر ہے۔

3)وارنہ ڈاکٹر بدوی غلط ہے۔

پس اگر ایک مسلمان مرد کسی مسلمان عورت سے زبردستی زنا کرتا ہے تو مرد کے الفاظ عورت کے الفاظ سے دگنا شمار ہوں گے۔ ایک غیر مسلم کے الفاظ شریعتی عدالت میں ایک مسلمان کے خلاف شمار نہیں ہوتے۔ ایک مسلمان ایک غیر مسلم عورت سے زبردستی زنا کرتا ہے حتیٰ کہ ایک دوسری غیر مسلم عورت موجود ہو اسکی بات (جو اس نے نہیں کی) ان دونوں کے الفاظ کے برابر شمار ہو گی۔ انسانی حقوق کمیشن آف پاکستان نے اپنی سالانہ رپورٹ میں کہا کہ ہر تین گھنٹوں میں پاکستان میں ایک عورت سے زبردستی زنا ہوتا ہے حتیٰ کہ پاکستان میں پولیس کی موجودگی میں تمام خواتین کے ٪72 کو جسمانی اور جنسی تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے ویمنز ایکشن فورم کہتا ہے کہ جیل میں عورتوں کا ٪75 فیصد زنا کے الزام میں جاتی ہیں۔ مردوں کے بارے میں نہیں بتایا جاتا کہ وہ کتنے ہیں ۔

صفحہ 324 مزید معلومات اور مثالوں کے لیے Why I am not a Muslim

دیکھیں۔

ایک مسلمان مرد غلامی سے آزاد ہوتا یا دو مسلمان عورتیں آزاد ہوتی ہیں ایک جہنم کی آگ کے لیے ابن ماجہ والیم 3 عدد 2522 صفحہ 509۔ عقلمند عورتوں کا ذکر پرانے عہد نامے میں 2 سیموئیل 14باب 2 آیت 20باب 16 سے 22 آیت میں ہے۔ پاک بیوی حکمت سے بولتی ہے امثال 31 باب 26 آیت۔ یقیناً اگر تم عقلمند نہ ہوتے؟ زبور 19 باب 7 آیت کہتی ہے۔ کہ خدا سادہ آدمی کو عقلمند بناتا ہے۔ اس کا مطلب ضروری نہیں کہ وہ دنیاوی علم میں دانشمند ہونگے بلکہ خدا کی حکمت میں ہونگے۔ اگر ایک آدمی اپنی بیوی کو اس کے آشنا کی وجہ سے قتل کرتا ہے تو اسے کسی گواہی کی ضرورت نہیں کہ وہ مجرم تھی سوائے آدمی کے الفاظ کے۔ ابن ماجہ والیم 4 کتاب 20 عدد 2606 صفحہ 41۔

نوکری میں خواتین

ڈاکٹر بدوی کے یہاں دلچسپ الفاظ ہیں۔ وہ کہتے ہوئے شروع کرتا ہے کہ ایک عورت کا مامتا میں بنیادی کردار ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اسے کام سے پہلے اپنے خاوند کی رضا مندی حاصل کرنا ضروری ہے۔ ڈاکٹر بدوی کہتا ہے ایک عورت نوکری تلاش کر سکتی ہے خاص طور پر قابلِ بھروسہ شبعہ جات میں۔ جب کبھی اس میں اسکی (عورت) ضرورت ہو۔ تاہم اگر وہاں کوئی ضرورت نہ ہو، تو پھر ڈاکتر بدوی کہتا ہے کہ کبھی بھی یہ ٹھیک نہیں کہ وہ وہاں کام کرے۔ڈاکٹر بدوی کا خیال طالبان سے کہیں بدتر ہے جو قریباً ہر کام سے منع کرتے ہیں۔ حتیٰ کہ اگر عورتوں کو فاقہ کشی کرنا پڑے۔ تاہم ایک بہت قدیم کتاب بائبل خاندان کی کام کرنے والی بیوی کا ذکر کرتی ہے۔ تجارتی سرانجام دہی کے لیے ابتدا کرتی ہے۔ اپنے خاوند کی مرضی کے بغیر خریدوفروخت کرتی ہے صرف اسکی خریدو فروخت اسکی مرضی کے ضرورت نہیں۔ یہ امثال 31: 10-31 میں ہے امثال اس اتفاق رائے کی کمی کو میاں بیوی کے درمیان مزہمت کا ذریعہ نہیں بناتی۔ لیکن آیت 11 بتاتی ہے کہ اس کے خاوند کو اس پر پورا اعتماد ہے۔ میرے اپنے ذاتی تجربے میں، اگر ہم ایک ریا کار گھر خریدتے ہیں۔ مجھے اپنی بیوی پر اور اعتماد ہوتا ہے کہ وہ خریدو فروخت کرے بہ نسبت میرے کرنے کے۔

خواتین اور قیادت

کوئی عورت نبی نہیں

صفحہ 13 پر ڈاکٹر بدوی کہتا ہے کہ مطالبات اور جسمانی تکالیف پیغمبروں اور انبیاء سے تعلق رکھتی ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ کوئی عورت نبی نہیں۔ کون کہتا ہے کہ خواتین نبی بننے کے قابل نہیں؟ کس قدر بدوی نا واقف ہے کہ بہ سی خدا ترس نبیہ ہوئی ہیں۔ مسلمان جانتے ہیں موسیٰ کی بہن مریم کو کہ وہ ایک خدا ترس عورت تھی۔ خروج 15: 20 کہتی ہے کہ وہ ایک نبیہ تھی۔ قضاۃ 4:4 میں دبورہ ایک نبیہ تھی۔ کم مشہور خلدہ ایک نبیہ تھی 2 سلاطین 22: 14 اور 2 تواریخ 34: 22 لوقا 2: 36 میں حنہ ایک نبیہ تھی جس بچے یسوع کو بطور ایک مسیح پہچان لیا تھا۔ یوایل 2: 28 اور اعمال 2: 17 کہتے ہیں دونوں بیٹے اور بیٹیاں نبوت کریں گے ہم یسوع کے زمانے سے پہلے ان کتابوں کی نقل رکھتے ہیں اور سورۃ والیم 5 عدد 46 کہتی ہے کہ یسوع نے توریت کی تصدیق کی جس کا خروج 15: 20 ایک حصہ ہے۔

کوئی عورت اقوام کی حکمران نہیں

ہمارا نقطہ یہ ہے کہ اسلام کا درست خیال پیش کرنا اور توازن کے لیے کہ زیادہ جدید مسلمان کیا کہتے ہیں۔ ایسا نہ ہو کہ کوئی غلطی سے سوچنے لگے کہ ڈاکٹر بدوی کے دشمن/ مخالف ہیں۔ ہم اس کتاب میں ایک نمونے کوپروان چڑھانا چاہتے ہیں جہاں ڈاکٹر بدوی زیادہ تر مسلمان فضیلت کا مخالف ہے لیکن اس مثال میں ہم سوچتے ہیں۔ ڈاکٹر ایک درست آدمی ہے۔ ہلے ہم ان حوالوں پر دیکھیں گے جو شریعت بیان کرتی ہے پھر مسلمان عالم کی تشریح دیکھیں گے اور پھر ڈاکٹر بدوی کی تشریح دیکھیں گے۔ محمد نے کہا ایسی قوم کبھی کامیاب نہیں ہو گی جس نے کسی عورت کو اپنا حکمران بنایا۔ بخاری والیم 9 عدد 219 صفحہ170-171۔ ابو بکر بیان کرتا ہے الحمل (اونٹ) کی جنگ کے دوران اللہ نے ایک کلمے سے فائدہ پہنچایا (میں نے نبی سے سنا) جب نبی نےخبر سنی کہ فارس کے لوگوں نے خسرو کی بیٹی کو اپنی ملکہ (حکمران) تو آپ نے کہا وہ (ایسی) قوم کبھی کامیاب نہ ہو گی جس نے اپنی حکمران عورت کو بنایا۔ بخاری والیم 9 عدد 219 صفحہ 171۔ توجہ کریں کہ محمد نے اصلی پس منظر میں یہ کہا تھا جب فارسیوں نے اپنی حکمراں عورت کو بنایا تھا۔ تاہم اس پر بھی غور کریں کہ اس حدیث کے اطلاق کا فائدہ مسلمانوں نے محمد کی وفات کے بعد اٹھایا جب عائشہ نے خلیفہ علی کو شکست دینے کی کوشش کی۔ پس بلاواسطہ پس منظر فارس تھا۔ اس کے بعد اس کی موزونیت عالمی کو تھی۔ آگے دو احادیث کہتی ہیں بخاری والیم 9 عدد 220-221 صفحہ 171-172 ۔ جب یہ ذکر کیا گیا کہ عائشہ نے بصرہ کی طرف ہجرت کی تو اس کا رد عمل تھا کہ "لیکن اللہ نے تمہیں آزمایا کہ آیا تم اللہ کی یا عائشہ کی فرمانبرداری کرتے ہو"۔ سورۃ 4: 34 کہتی ہے "مرد عورتوں کے محافظ اور نگہبان ہیں کہونکہ اللہ نے ایک کو دوسرے کی نسبت زیادہ طاقت دی ہے اور کیونکہ وہ ان کی اپنے وسائل سے مدد کرتے ہیں" غور کیجیے لفظ (طاقت) پر کیونکہ یہ لفظ عربی میں نہیں ہے مگر یوسف علی کے ترجمے میں ہے۔ وہ یہ ہے کہ صحیح مسلم، بخاری میں کچھ مختلف نہیں ہے۔ یا قرآن کہتا ہے کہ عورتیں پیشوا نہیں ہو سکتیں۔ سورۃ 4: 34 میں قیادت کا ذکر نہیں ہے۔ صرف اس ایک آیت کی بنیاد بخاری میں۔ اکثر مسلمانوں کا خیال ہے کہ عورتیں صدر اور گورنر نہیں ہو سکتیں، یا کسی سرکاری قیادت میں کوئی درجے پر، ڈاکٹر بدوی بہت سےکمزور دلائل دیتا ہے۔ لیکن وہ ایک آدھی مضبوط بھی ہیں۔ ڈاکٹر بدوی کہتا ہے کہ کسی قوم کا حکمران بننے پر پابندی نہیں ہے۔ کسی دوسری سرکاری ملازمت پر پابندی نہیں اور حتیٰ کہ مسلمان حکومتیں ، جیسے الطبری عورتوں کو بطور منصف بھی قبول کرتے ہیں۔ اس کے برعکس ، دبورہ، باراک کے زمانے میں اسرائیل کی چوٹی کی رہنما اور ایک منصف تھی۔ وہ ایک خدا ترس عورت اور ایک خدا ترس رہنما تھی۔ اور خدا نے کبھی بھی کوئی اشارہ نہیں دیا تھا کہ آیا وہ غلط تھی۔ یا خواتین کی جو اس بہادر خواتین پر رشک کرتی تھیں غلط کیا ہو۔ اسرائیل قوم اس وقت کامیاب بھی ہوئی۔

اسلام میں بیویوں کا کردار

ایک بیوی کو اپنے خاوند کی اجازت کی ضرورت ہے

ایک بیوی اپنے خاوند کی اجازت کے بغیر گھر میں کسی کو داخل نہیں کر سکتی۔ ابوداود والیم 2 عدد 2452-2453 صفحہ 677-678

کا مطلب ہے ضروت سے بڑھ کر) رمضان کے علاوہ بیوی Superoyatory)

صرف اپنے خاوندکی اجازت سے روزہ رکھ سکتی ہے۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 1761-1762 صفحہ 62 محمد نے کبھی ایسے خاوند کو نہ روکا جو اپنی بیوی کو نماز اور روزہ وغیرہ کہ وجہ سے مارتا ہو۔ ابن داود والیم 2 عدد 2453 صفحہ 677-678۔ مرد اپنی بیویوں کو بتاتے کہ کب وہ نہاتے ہیں۔ اگر کوئی (اسکی بیوی) وضو کرتی ہے اور وہ خود وضو کرتا جمعہ کے دن وہ جلدی( جمعہ کی نماز) کے لیے چلا جائے۔ شروع سے خطبہ سننےِ پیدل چلنا سواری پر نہیں، امام کے نزدیک بیٹھے، توجہ سے سنےم نہ کہ فضول باتوں میں کھو جائے۔ وہ ایک سال کے روزوں کا اجر پائے گا اور ہر قدم پر جو وہ چلتا ہے ایک رات کی عبادت اور ایک سال کے روزوں کا اجر پائے گا۔ ابوداود والیم 1 عدد 345 صفحہ 91۔ بیوی کے لیے اجر کا صاف صاف ذکر نہیں کیا گیا۔ ایک عورت کو اپنے خاوند کی مشترکہ جائیداد سے کوئی تحفہ نہیں دینا چاہیے ابو داود والیم 2 عدد 3539 صفحہ 1006۔ یہ عام بات ہے کیونکہ عورت میں حکمت اور ذہانت کی کمی ہوتی ہے۔ ابوداود والیم 2 حاشیہ 2991 صفحہ 1006۔ ایک بیوی اپنے خاوند کی مرضی کے بغیر کوئی تحفہ نہیں دے سکتی۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 2388 صفحہ 423۔

خواتین طلاق کے متعلق زیادہ پابند ہیں

مرد خواتین کو چھوڑ سکتے ہیں لیکن بیویاں ، خاوندوں کو نہیں چھوڑ سکتیں۔ بخاری والیم 7 عدد 121-122 صفحہ 93، والیم 7 سبق 93، والیم 7 عدد 130 صفحہ 99۔ جنت میں ایک بہت خوشبو ہے۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 2054 صفحہ 236۔ ایک عورت جو بغیر کسی معقول وجہ کے طلاق کا کہتی ہے وی جنت کی خوشبو سے محروم ہے۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 2055 صفحہ 237۔ اسی طرح اگر ایک عورت بغیر کسی معقول وجہ کے طلاق کا کہتی ہے ابو داود والیم 2 عدد2218 صفحہ 600۔ تاہم مرد پابند نہیں بخاری والیم 3 عدد 859 صفحہ 534کہتی ہے ایک مرد کسی ناخوشگوار بات کہ وجہ سے اپنی بیوی کو طلاق دے سکتا ہے۔ جیسے عمر رسیدہ وغیرہ کہ وجہ سے ایک مرد مسلمان ہو گیا اور اس کی بیوی کو پتہ چلے، وہ مسلمان ہو کر اپنے خاوند کو طلاق دے اور دوبارہ شادی کرے۔ اس کے بعد مرد نے محمد کو بتایا۔ محمد اسے (عورت) کو اس کے موجودہ خاوند سے دور لے گیا اور اسے پہلے خاوند کو دے دیا۔ ابو داود والیم 2 عدد 2230-2231 صفحہ 603

عارضی شادی

علی بن ابی طالب کا بیان ہے، خیبر کے دن اللہ کے رسول نے متاء سے (عارضی شادی) سے منع کر دیا اور گدھے کا گوشت کھانے پر بھی پابندی، خیبر محمد کی طرز زندگی کا بالکل پچھلا حصہ تھا اس کے مرنے سے زیادہ پہلے نہیں۔ بخاری والیم 5 کتاب 59 عدد 527 صفحہ 372 اسی طرح ابن ماجہ والیم 3 عدد 1961-1963 صفحہ 180-182 بخاری والیم 7 عدد 50-52 صفحہ 36-37 یہ عارضی عارضی شادی کے متعلق بھی بحث کرتی ہیں۔ اکثر لیکن سارے نہیں سنی مسلمان عارضی شادیاں نہیں کرتے، لیکن شیعہ مسلمان ایسا کرنے میں آزاد ہیں۔" ابو جمرہ کا بیان ہے میں نے ابن عباس کو سنا( ایک فتویٰ دیتے ہوئے) جب اس نے عورتوں کے ساتھ عارضی شادی(متاء)کے متعلق پوچھا اور اس نے اس کی اجازت دی (نکاح المتا) ۔اس کے ایک آزاد غلام پر اس نے اُس سے کہا، یہ صرف اسوقت ہے جب اس کہ بڑی ضرورت ہو اور عورتیں تھوڑی ہوں۔ اس پر ابن عباس نے کہا، ہاں" بخاری والیم 7 کتاب 62 عدد 51 صفحہ 36-37۔ جمیر بن عبداللہ اور سلٰمی بن الاکوا کا بیان ہے۔ جب ہم ایک فوج میں تھے۔ اللہ کا رسول ہمارے پاس آیا اور کہا، تمہیں متاء ( عارضی شادی) کرنے کی اجازت ہے سلٰمی بن الاکوا نے کہا، اللہ کے رسول نے کہا، اگر ایک مرد اور ایک عورت عارضی شادی کرنے پر راضی ہوں تو ان کی شادی تین راتوں تک ختم ہونی چاہیے۔ اور اگر وہ جاری رکھنا چاہیں جاری رکھ سکتے ہیں اگر وہ الگ ہونا چاہیں الگ ہو سکتے ہیں۔ مجھے نہیں پتہ آیا کہ یہ صرف ہمارے لیے یا سب لوگوں کے لیے۔ ابو عبداللہ نے کہا علی نے یہ واضح کیا کہ نبی نے کہا کہ متاء شادی ختم کردی گئی ہے یعنی( غیر شریعتی) بخاری والیم 7 کتاب 62 عدد 52 صفحہ 37۔ محمد نے خیبر کے موقع پر عارضی شادی سے منع کردیا موتاہ مالک 28۔18۔41 ربیعہ ابن عمیا نے عارضی شادی کی اور وہ عورت حاملہ ہو گئی (خلیفہ) عمر بن الخطاب دھمکاتے ہوئے باہر آیا اور کہا ، یہ عارضی شادی میں سے دوچار ہوا ہے، میں سنگسار کا حکم دوں گا کہ اس کے ساتھ ایسا ہی کیا جائے۔ موتاہ 42۔18۔28 محمد کے اس اصول کا جب جدید اثر دیکھنا ہو تو

14 جون 2007 دیکھیں۔Fox News Today

تہران۔ ایران قبول کر رہا ہے بالکل ظاہری طور پر، دوست فائدے کے ساتھ۔ اسلامی جمہوریہ جو مطالبہ کرتی ہے کہ عورتیں سر پر اسکارف پہنیں یا کوڑوں کی سزا لیں۔ بسوں پر مرد و زن علیحدہ علیحدہ ہوں۔ اور چھوٹے راستوں پر بھی الگ ہوں۔ اور زنا کی سزا سزائے موت ہو۔ اور وزیر داخلہ سیدھا / براہ راست اس کا فیصلہ کرے۔ جو خود مسلمان جماعت کا ممبر/ رکن ہے۔ مردوں اور عورتوں کو ایک خاص مدت تک شادی کرنے کی اجازت دیں۔ اس مہینے کے شروع میں وزیر داخلہ مصطفیٰ پور محمد نے اعلان کیا کہ عارضی شادی کرنا خدا کا قانوں ہے اور ایرانیوں کی حوصلہ افزائی کی اور اس نے کہا کہ لوگ اس نظریے کو قبول کریں۔ کہ مرد و زن قانونی طور پر باندھے جائیں لیکن عارضی اکٹھ کے لیے، اس کی تجویز کو سنجدگی سے لیا گیا۔ لوگوں کی طرف سے حیران کن توجہ سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ اسلامی مذہبی حکومت کو 28 سالوں سے برداشت کر رہے ہیں۔

مُستعمل / مہلل

طلاق شدہ عورت اس وقت تک اسی آدمی سے شادی نہیں کر سکتی جب تک وہ کسی دوسرے سے شادی نہ کرے۔بخاری والیم 7 کتاب 63 عدد 186-187 صفحہ 135، ابو داود والیم 2 عدد 2192 صفحہ 592-593۔ توجہ کیجیے کہ اگر کوئی آدمی اسی عورت سے دوبارہ شادی کرے تو اسے کسی سے شادی کرنے کی ضرورت نہیںس۔ اگر کوئی آدمی کسی عورت کو ناقابل واپسی طلاق دیتا ہے تو اس (عورت) کے لیے ضروری ہے ان کے دوبارہ ملنے کے لیے وہ (عورت) کسی سے شادی کرے۔ابن ماجہ والیم 3 عدد 1933-1936 صفحہ 165-168۔ یہاں مرد کے لیے کوئی عجیب اصول نہیں ہے۔ ابو داود والیم 2 عدد 2302 صفحہ 629 بھی اسلامی معاشرے میں مسطہل کے گمراہ کرنے والے اصول کے بارے بحث کرتی ہے۔ رفعا ابن سموال نے اپنی بیوی تمیہ کو ناقابل واپسی طلاق دی (3 دفعہ) اور اس نے کسی دوسرے سے شادی کر لی جو شادی کو پکا نہ کر سکا۔ بعد میں رفعا اس عورت سے دوبارہ شادی کرنا چاہتا تھا لیکن محمد نے کہا کہ رفعا شادی نہیں کر سکتا جب تک تمیہ کسی سے پکی شادی نہ کرے۔ موتاہ مالک 17۔7۔28۔ عائشہ نے کہا محمد نے کہا کہ ایک مرد اور عورت دوبارہ شادی نہیں کر سکتے جنہوں نے نا قابل واپسی طلاق دی ہو، جب تک وہ عورت کسی دوسرے سے شادی نہ کرے۔ موتاہ مالک 17۔7۔28 یاہا کا بیان ہے کہ مالک نے یہی کہا ہے۔ موتاہ مالک 19۔7۔28- حتیٰ کہ ایک مسلمان عورت جو مُستعہل کے لیے راضی نہ ہو۔ وہ مسلمان معاشرے سے نکل جائے۔ تاہم، یہ غیر مسلم، غلام لڑکی، یا حتیٰ کہ ایک آزاد خیال بیوی کو بھی ایسا کرنا پڑے گا۔ ہم اگلی بار اسے مکمل کریں گے۔

خواتین کے لیے کلام( مردوں کے لیے بھی)

بعض اوقات مسلمان خواتین کمتر محسوس کر سکتی ہیں ، جیسا احادیث نے سکھایا، یا وہ شرمندگی محسوس کر سکتی ہیں کہ وہ خواتین ہیں۔ لیکن میں صرف کہنا چاہتا ہوں کہ یہ بہت غلط ہے۔ خدا نے آپ کو پیدا کیا ہے اگر آپ خیال کرتی ہیں کہ تم غیہر ضروری ہو، اور خدا نے غیر ضروری پیدا کیا، تو تم خدا کی توہین کر رہی ہو۔ زبور (عربی میں) 139باب 14 آیت سکھاتی ہے کہ ہم عجیب و غریب طور سے بنے ہیں۔ خدا کی مرکزی سچائیوں پر یقین کرنے کے لیے انتخاب کرنا کافی نہیں۔ تمہیں ان جھوٹی باتوں کا بھی یقین نہیں کرنا جو خدا کی مرکزی سچائیوں کی مخالف ہیں۔ محمد نے تین بدترین جھوٹوں میں سے ایک جھوٹ سکھایا۔ کہ وہ خدا کی صفت اسے دینا، جو چیزیں اس نے نہیں کہیں۔ جبکہ ہمیں کسی کے بارے بھی جھوٹ نہیں بولنا چاہیے، ییہ بہت بری بات اور برا جھوٹ ہے کہ خدا کو وہ صفت دینا جو باتیں کدا نے نہیں کہیں۔ توبہ کے وقت تم جھوٹوں کو قبول کرتے ہو، حتیٰ کہ یہ جانتے ہوئے کہ وہ جھوٹ تھے۔ خدا سے دعا کریں کہ وہ تم پر سچائی ظاہر کرے۔ وہ تمہیں سچائی کی پیروی کرنے والا دل دے۔ اور تمام جھوٹی باتوں سے توبہ کرنے کی توفیق دے۔ جو خود، بت بھی ہو سکتے ہیں۔ یہاں کونسی چیز ہے جسے تم خدا سے بڑھ کر محبت کرتے ہو کوئی بھی چیز جسے آپ خدا سے بڑھ کر محبت کرتے ہو ایک بت ہو سکتی ہے۔ حتیٰ کہ وہ ایک مذہب بھی ہو سکتا ہے۔ خدا سے بڑھ کر اسلام سے پیار نہ کرو اور ہم تمہیں نہ ہی خدا سے بڑھ کر مسیحت سے پیور کرنے کے لیے کہتے ہیں۔ سادہ سی بات کہ اپنے پورے دل، اپنی پوری جان، اپنی پوری طاقت، اپنی پوری عقل سے خدا سے محبت کرو۔ اور میں پر اعتماد ہوں کہ خدا تمہیں اپنے کلام کی سچائی دکھائیگا۔ کوئی چیز، خدا کے فرزندوں کو خدا کی محبت سے جدا نہیں کر سکتی۔ رومیوں 8باب 29 سے 39 آیات، 2 کرنتھوں 5باب 5 آیت، 1 تھسلنکیوں 4 باب 17آیت، 5 باب 10 آیت۔ مسیح میں محبت کی زندگی گزاریں، 1کرنتھیوں 16باب 14آیت، افسیوں 5 باب 1 آیت،1یوحنا 3باب 10 سے 18 ، 23 آیات، 4باب 7-13 آیات، 5باب 2 آیت، 2 کرنتھیوں 8باب 24 آیت ،یوحنا 17باب 26 آیت

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

اسلام عورتوں کے متعلق حقیقتاً کیا کہتا ہے

جمال بدوی کے کتابچے پر ایک تبصرہ / تنقید

اسلام میں جنسی انصاف: حصہ دوم

احادیث اور قرآن میں شادی کے اور جنسی تعلقات

کثرت ازدواج، شادی اور طلاق

کچھ لوگ ہو سکتا ہے خیال کریں کہ یہودی ، مسیحی ضابطہ اخلاق اور مسلم ضابطہ اخلاق بہت ملتے جلتے ہیں۔ شادی اور جنس کے معاملے میں مستند سنی اسلامی قانون حقیقتاً بڑا مفصل بیان کیا گیا ہے۔ اور کونسی چیز کی اجازت ہے اس میں بہت مختلف ہے ۔آؤ ہم سیکھیں کہ مسلمان جاگیر کیا سکھاتی ہے اور پھر اپنے نتائج پر آتے ہیں۔ ڈاکٹر بدوی صفحہ 27 پر دعویٰ سے کہتا ہے۔ کہ عورتوں اور مردوں کی پیدا شدہ برابر تناسب اس بات کو نا ممکن بناتا ہے کہ کثرت ازدواج اسلام کے لیے نمونہ نہ تھا، تاہم اگر یہ ناممکن نہ تھا یہاں آدمیوں کی نسبت عورتیں زیادہ ہوتیں۔ کیونکہ

1)ایماندار آدمی سزا پاتے، اگر وہ جہاد میں نہ لڑتے، پس زیادہ اس راہ میں مارے جاتے۔

2)جبکہ مسلمان عورتیں غیر مسلم مردوں سے شادی نہیں کر سکتیں، مسلمان مرد غیر مسلم دوسری بیویاں رکھ سکتے ہیں۔ لامحدود یارانہ رکھ سکتے ہیں۔ جنسی تعلق بھی رکھ سکتے ہیں۔ لامحدود عورتوں کے ساتھ جو نہ تو اسکی چار باقاعدہ بیویوں میں سے ہو اور نہ ہی آشنا عورت ہو۔ بلکہ سادہ سی غلام یا اسیر ہوں ان کے دائیں ہاتھ کی جائیداد ہیں۔

طلاق پر رویہ

اسلام میں کوئی مرد کسی بھی وجہ سے اپنی بیوی کو طلاق دسے سکتا ہے بخاری والیم 3 عدد 859 صفحہ 534 کہتی ہے ایک مرد کسی ناخوشگوار بات پر پانی بیوی کو طلاق دے سکتا ہے، جیسے عمررسیدہ وغیرہ، عمر نے اپنے بیٹے کو حکم دیا کہ اپنی بیوی کو طلاق دے دے لیکن اس نے انکار کر دیا کیونکہ وہ اس سے بہت محبت کرتا تھا۔ پس عمر محمد کے پاس کیا۔ اور محمد نے اسے حکم دیا کہ اسے(عورت) کو طلاق دے۔ ابو داود والیم 3 عدد 5119 صفحہ 1422۔ عبداللہ بن عمر کا بیان ہے کہ اللہ کے رسول نے کہا قانونی افعال میں سب سے حقیر/ کمینہ فعل اللہ کی نظر میں طلا ق ہے ابن ماجہ والیم 3 عدد 2018 صفحہ 216۔ عمر نے کہا محمد نے حصفہ کو طلاق دی (ناقابل واپسی طلاق) اور پھر اسے واپس لے آیا ابو داود والیم 2 عدد 2276 صفحہ 619۔ محمد نے اپنے لے پالک بیٹے زید کو حکم دیا کہ زینب کو طلاق دے دے اور پھر محمد نے زینب سے شادی کر لی۔ زید کے پاس کوئی موقع نہ تھا کیونکہ محمد نے سورۃ 33: 36-38 تلاوت کر دی۔ مسلمان یقین رکھتے ہیں کہ آسمانی تختی پر قرآن غیر تخلیقی اور لکھا ہوا ہے۔ لیکن سورۃ 33: 36-38 ذکر کرتی ہے کہ زید بنام کوئی موقع نہیں رکھتا ( زینب کو طلاق دینے میں) بعد میں زینب بنت جیش نبی کی دوسری بیویوں کے سامنے شیخی مارتی اور کہا کرتی تھی کہ اللہ نے آسمان پر میری شادی نبی کے ساتھ کی۔ بخاری والیم 9 عدد 517 صفحہ 382، والیم 9 عدد 516 صفحہ 381-383۔ جیسا کہ الگ "بِن" کا مطلب بیٹا اور "بنت" کا عربی میں بیٹی ہے۔ ایک مرد کو اگر اس کا باپ حکم دے تو اپنی بیوی کو طلاق دینی پڑتی ہے۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 2088-2089 صفحہ 259-260۔ دو مسلمان مرد اچھے دوست تھے۔ پس ایک مرد نے دوسرے سے کہا جب بیوی کو وہ طلاق دینا چاہے تو دوسرا اس سے شادی کر سکتا ہے۔ بخاری والیم 5 کتاب 58 عدد 125 صفحہ 82- ایک مرد کی کئی سال تک ایک بیوی رہی۔ اس سے کئی بچے پیدا ہوئے۔ اس نے اسے تبادلہ کا ارادہ کیا۔ لیکن اس نے اسے وہاں رکھا جب اس(عورت نے اتفاق) کیا کہ اس کا ساتھ ترک کرے۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 114 صفحہ 188۔ سنی سکولوں میں طلاق پر کچھ فرق ہیں۔ صحیح مسلم والیم 2 حاشیہ 1464 صفحہ 520۔ کتاب 10 بھی دیکھیں طلاق کی کتاب ابن ماجہ والیم 3 صفحہ 205 طلاق پر ایک پورے باب کے لیے۔

یحیٰ کا بیان ہے مالک نے سنا کہ ایک آدمی عبداللہ بن عمر کے پاس آیا اور کہا ابو عبدالرحمان! میں نے اپنا حکم اپنی بیوی کے ہاتھ میں دے دیا اور اسے طلاق دے دی۔ تم کیا خیلا کرتے ہو؟ عبداللہ بن عمر نے کہا،میرا خیال ہے کہ یہ اس کے کہنے کے مطابق ہے۔ آدمی نے کہا ایسا نہ کرو ابو عبدالرحمان ابن عمر نے کہا تم نے یہ کیا۔ یہ میں نے نہیں کیا موتاہ مالک 10۔2029۔ ایک غلام لڑکی، ایک آزاد غلام لڑکے کے ساتھ بیاہی گئی اور حصفہ محمد کی بیوی سے طلاق کے لیے پوچھا۔ حصفہ نے کہا وہ آزاد لڑکی کو ترجیح دیتی ہے کہ ایسا نہ کرے۔ بلکہ اسے بتایا کہ اگر اسکے خاوند نے اسکے ساتھ ہم بستری نہیں کی اسوقت تک وی آزاد ہے وہ اسے طلاق دینے کے لیے آزاد ہے۔ لیکن اگر یہ معاملہ نہیں ہے تو پھر وہ یہ اختیار نہیں رکھتی موتاہ مالک 27۔9۔29۔

شادی کی مرضی لازمی ہے لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈاکٹر بدوی صفحہ 23 پر کیتا ہے کہ اسلام میں عورت کو حق ہے کہ وہ شادی کی تجویز کو قبول کرے یا رد کرے۔ تاہم، یہ عجیب بات ہے کہ خاموشی مرضی کا اشارہ کرتی ہے۔ ابوہریرہ کا بیان ہے کہ اللہ کا رسول کہا کرتا تھا کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک کنواری کی اسوقت تک شادی نہ کی جائے جب تک اسکی اجازت نہ لی جائے۔ انہوں نے اللہ کے رسول سے کہا۔ اس کی مرضی کیسے طلب کی جاسکتی ہے؟ آپ نے کہا جب وہ خاموش رہے۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 8 عدد 3303 صفحہ 714۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 18770-1872 صفحہ 129-130، ابوداود والیم 2 عدد 2087-2088 صفحہ 560، والیم 2 عدد 2095 صفحہ 562 بخاری والیم 9 کتاب 85 عدد 79 صفحہ 66 بخاری والیم 9 کتاب 86 عدد 100 صفحہ 81۔ در اصل مسلمان عالم کنواری سے اس کی مرضی کے خلاف شادی کرنے کے ساتھ متفق نہیں ۔ ابوداود والیم 2 حاشیہ 1425 صفحہ 561۔ مثلاً یحیٰ نے کہا اس نے دوسروں سے سنا ہے (محمد سے نہیں) یہ کہتے ہوئے کہ اگر کسی کنواری کی شادی اسکی مرضی کے بغیر اسکا باپ کردے تو وہ اسکی پابند ہے موتاہ مالک 7۔2۔28۔ سنی اسلام کے چار بڑے سکول(مدرسے) ہیں۔ حنفی بھی سکھاتے ہیں کہ حتیٰ کہ ایک خاتون ایک بالغ عورت ہے تو سربراہ کی اجازت لینا ضروری ہے ابوداود والیم 2 حاشیہ 1409 صفحہ 557۔ اگر عورت کے سربراہ کی مرضی نہیں ہے تو شادی جائز نہیں۔ ایک عورت جو اپنی مرضی سے کسی مرد سے شادی کرتی ہے ایک زناکار ہوتی ہے۔ ابن ماجہ والیم 2 عدد 1879-1882 صفحہ 137-139 تاہم بدوی ایک چھوٹی تفصیل کا ذکر کرنے میں ناکام رہا ہے غلام عورتوں کا کوئی حق نہیں کہ وہ جنسی غلام بننے سے انکار کریں۔ کیونکہ اگر وہ انکار کریں تو ان کے مالک حق رکھتے ہیں کہ وہ کسی بھی طریقے سے ان سے جنسی تعلق رکھیں۔ جیسا کہ اگلا حصہ ظاہر کرتا ہے۔

غلام لڑکیوں اور اسیر عورتوں سے اسلام میں مباشرت

مجھے پہلے ہی خبردار کرنا ضروری ہے کہ اس میں کچھ مواد بڑا کھلم کھلا ہے۔ یاد رکھیں اگرچہ، ہم راسخ الاعتقاد سنی مسلمانوں کا اچھا اور اخلاقی مذہبی لٹریچر پرکھ کر پڑھ رہے ہیں۔ لیکن ہم اس کا منصف ہونے دیں گے۔ یہاں حوالہ جات اور اقتباسات ہیں پس تم فیصلہ کر سکتے ہو۔

اسیر لڑکیوں کے ساتھ مباشرت

غلام عورتوں کا ننگا کرنا ٹھیک ہے صحیح مسلم والیم 3 کتاب 17 عدد 4345 صفحہ 953 اور ابن ماجہ والیم 4 عدد 2840 صفحہ 187 کے مطابق۔ کربلا کی جنگ کے بعد (محمد کی وفات کے بعد) مسلمان سپاہی یزید کی حمایت کرتے ہوئے مسلمان عورتوں کو جو حسین کی حمایتی تھیں زبردستی ننگا کرتے تھے۔ سنی مسلمان ننگا کرنے کے متعلق پریشان ہیں۔ حتیٰ کہ مسلمان عورتیں۔ الطبری والیم 9 صفحہ 161 ۔غلام عورتوں کے ساتھ مباشرت، بنی المستلیق کے درمیان بخاری والیم 9 عدد 506 صفحہ 372 ابوداود والیم 2 عدد 2167 صفحہ 582 ۔ حقیقت کی غلاموں (عورتیں) کے ساتھ مباشرت ٹھیک ہے صحیح مسلم والیم2 کتاب 8 عدد 3371-3374 صفحہ 732-735۔ ابو داود والیم 2 عدد 2150 اور حاشیہ 1479 صفحہ 577-578۔ میں ہے۔ ابو سعد الخدری کا بیان ہے کہ جبکہ وہ اللہ کے رسول کے ساتھ بیٹھا تھا۔ اس (رسول) نے کہا اوہو! اللہ کے رسول ہم غلام عورتوں کے لوٹ کے مال میں شراکت کرتے ہیں اور ہم ان کی قیمتوں میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ صحبت کی روک تھام کے متعلق آپ کی کیا رائے ہے؟ (یعنی ایکی جنسی کام) نبی نے کہا کیا تم کرو گے؟ تمہارے لیے بہتر ہے کہ تم نہ کرو۔ کوئی جان ایسی نہیں جسے اللہ نے وجود کے لیے مقرر نہ کیا ہو ۔ لیکن وہ یقیناً وجود میں آئے گی۔ بخاری والیم 3 عدد 432 صفحہ 237۔ بخاری والیم 5 کتاب 59 عدد 459 صفحہ 317۔ والیم 7 عدد 136-137 صفحہ 102-103، والیم 8 عدد 600 صفحہ 391، ابوداود والیم 2 عدد 2166-2168 صفحہ 582 بھی دیکھیں۔ ابو سعد الخدری نے کہا اللہ کے رسول نے ایک فوجی مہم، جنگ حنین کے موقع پر

کو بھیجی۔ ان کا اپنے دشمن سے آمنا سامنا ہوا اور وہ ان سے لڑے۔ انہوں Awtas

ان کو شکست دی۔ اور ان کو اسیر کر لیا۔ آپ کے صحابہ کرام میں کچھ غلام عورتوں سے ان کے خاوندوں کی موجودگی میں صحبت کرنے سے ناخوش تھے۔ جو مومن نہیں تھے۔ پس اللہ قادر مطلق نے آیت نازل کی۔ سورۃ 4: 24 "اور تمام شادی شدہ عورتوں کو (منع کیا گیا ہے) تم ان کو بچاؤ جو اسیر ہیں کیونکہ وہ تمہارے دائیں ہاتھ کی جائیداد ہیں یہ ان کے لیے کہنا تھا کہ وہ ان کے لیے قانونی جائز ہیں۔ جب وہ اپنا انتظار والا حصہ مکمل کر لیں۔ (1479) ابوداود والیم 2 عدد 2150 صفحہ 577۔ جنگ کا مال غنیمت تقسیم کرنے کے بعد، ایک مرد ایک حیض کرنے کے بعد غلام عورت سے صحبت کرنے کا حق دار ہے۔ اگر وہ حاملہ نہ ہو۔ اگر وہ حاملہ ہو جاتی ہے تو اسے (مرد) کو بچہ جننے تک انتظار کرنا چاہیے۔ یہ مالک الشفی کا خیال ہے اور ابو تھاور کا۔ ابو حنیفہ کہتا ہے کہ اگر خاوند اور بیوی دونوں اکھٹے غلام ہوں، تو ان کی شادی جاری رکھی جائے ان کو جدا نہ کیا جائے۔ علما کی اکثریت کے مطابق انہیں الگ ہونا ہو گا۔ الاوازا ان کی شادی برقرار رہے گی جب تک وہ مال غنیمت کا حصہ رہیں۔ اگر کوئی آدمی انہیں خرید لیتا ہے تو اگر وہ چاہے انہیں جدا کر سکتا ہے۔ اور ایک حیض کے بعد وہ غلام عورت سے صحبت کر سکتا ہے۔ غور کیجیے کہ محمد نے صفیہ سے شادی کی بالکل جنگ کے بعد۔ ابوداود والیم 2 حاشیہ 1479 صفحہ 577-578۔ 1کرنتھیوں 6: 9-10 کہتی ہے "کیا تم نہیں جانتے کہ بدکار خدا کی بادشاہی کے وارث نہ ہوں گے؟ فریب نہ کھاؤ نہ حرامکار خدا کی بازشاہی کے وارث ہوں گے نہ بت پرست نہ زنا کار نہ عیاش نہ لونڈے باز نہ چور نہ لالچی نہ شرابی نہ گالیاں بکنے والے، نہ ظالم۔

) ایک مسلمان جنگجو عورت کی ماہواری کے ختم ہونے کا انتظار کرتا ہے KJV)

کہ اس کے ساتھ صحبت کی جائے۔ ابوداود والیم 2 عدد 2153-2154 صفحہ 578۔ ایک آدمی جو اپنی کئی غلام لڑکیوں کے ساتھ مباشرت کرتا ہے کا ذکر ہے۔ اگرچہ وہ ایک بیوی سے زیادہ کے پاس دن میں ایک دفعہ نہیں جا سکتا موتاہ مالک 90۔23۔3۔ ابن مہیرز۔ میں نے ابو سعد کو دیکھا اور اس سے زبردستی مباشرت کے بارے پوچھا۔ ابو سعد نے کہا۔ ہم اللہ کے رسول کے ساتھ غزوہ بنی مستعلیق میں گئے۔ ہم کچھ عربوں کو بطور غلام پکڑ لیا ہماری اپنی بیویوں سے لمبی جدائی نے ہمیں سخت دبایا۔ اور ہم نے زبردستی مباشرت کرنا چاہا۔ ہم نے اللہ کے رسول سے پوچھا (آیا کہ یہ جائز ہے) اس نے کہا تمہارے لیے بہتر یہ ہے کہ تم اسیا نہ کرو۔ کوئی بھی جان جو اللہ نے بنائی ہے قیامت کے دن تک بنائی ہے۔ لیکن بالکل وجود میں آئیگی۔ بخاری والیم 3 عدد 718 صفحہ 432۔ غور کیجیے کہ غلام عورتوں کو کسی بھی طریقے سے بیویاں خیال نہیں کیا جاتا۔ وہ نہ تو بیویاں ہیں اور نہ ہی کسبیاں۔ اور ان کو دیکھ کر محمد سے ان کے بارے میں پوچھنے کی ضرورت نہیں تھی۔ اس کے برعکس، پرانا عہد نامہ سکھاتا ہے اگر ایک سپاہی غلام عورت کو چاہے تو اسے پہلے اس سے شادی کرنا ہوگی۔ اور صرف ایک مہینہ انتظار کرنا پڑے گا۔ استثنا 21: 10-14۔

غلام لڑکیوں کے ساتھ زائد ازدواجی تعلقات

مسلمان غلاموں کو مباشرت کے لیے مجبور کر سکتے ہیں۔ بعض مغربی لوگوں کے لیے نہ صرف حیران کن ہو سکتا ہے حتیٰ کہ کئی مسلمانوں کے لیے بھی جو اپنی احادیث سے ناواقف ہیں ہو سکتا ہے نہ جانتے ہوں۔ جو محمد اور کئی مسلمانوں نے تاریخی طور پر کیں۔یہ بڑی معقول بات ہے۔ ایک مسلمان اس یقین کی امید نہ کرلے جب تک اسے ثبوت نہ دیئے جائیں۔ پس یہاں مکمل ثبوت ہے۔ ہم اللہ کے رسول کے ساتھ بلمُستعلیق کی مہم پر باہر گئے اور کچھ شاندار عرب عورتیں اسیر کر لیں اور ہم نے ان کی خواہش کی۔ کیونکہ ہم اپنی بیویوں کی عدم موجودگی میں مبتلا تھے۔ (لیکن اسی وقت) ہم نے ان کے لیے تاوان کی بھی خواہش کی۔ پس ہم نے ان کے ساتھ صحبت کا فیصلہ کیا۔ لیکن مشاہدہ کرتے ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔"لیکن ہم نے کہا: ہم یہ فعل کر رہے ہیں جبکہ اللہ کا رسول ہمارے درمیان ہے کیوں نہ اس سے پوچھ لیں؟ پس ہم نے اللہ کے رسول سے پوچھا اور اس نے کہا کوئی بات نہیں اگر تم یہ نہیں کرتے۔ کیونکہ کہ ہر جان جو پیدا ہوئی ہے روز قیامت پیدا ہو گی۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 8 عدد 3571 صفحہ 732-733۔ توجہ کریں کہ اس اقتباس میں یہ عورتیں کسی بھی طریقے سے بیویاں خیال نہیں کی جا سکتیں۔بخاری والیم 3 کتاب 34 سبق 111 عدد 432 صفحہ 237، والیم 5 کتاب 59 سبق 31 عدد 459 صفحہ 317،والیم 8 کتاب 76 سبق 3 عدد 600 صفحہ 391۔ یہ بھی سکھاتی ہیں کہ یہ احادیث اخلاقاً قابل قبول ہیں اگرچہ ہمیشہ مطلوب نہیں ہوتیں۔ کہ غلام عورتوں کو صحبت کے لیے مجبور کیا جائے۔ کیا ایک غلام لڑکی کے ساتھ دور تک سفر کیا جا سکتا ہے یہ جانے بغیر کہ آیا وہ حاملہ ہے یا نہیں؟ الحسن نے معلوم کیا کہ اسے اس کے مالک کا بوس و کنار کرنا یا اس سے ہم آغوش ہونا اس کے لیے نقصان دہ نہیں۔ ابن عمر نے کہا ایک غلام لڑکی جو جنسی تعلق کے لیے مناسب ہو کسی کو بطور تحفہ دی جائے یا بیچی یا آزاد کی جائے۔ تو اس کے مالک کو اس کے ساتھ مباشرت نہیں کرنی چاہیے۔ اس سے پہلے کہ وہ ایک حیض کی ماہواری پوری کرے پس اس سے یقین ہو گا کہ وہ حاملہ نہیں اور ایک کنواری کے لیے کوئی اور ضرورت نہیں۔ اتا نے کہا کہ ایک حاملہ غلام لڑکی سے ہم آغوش ہونے کا کوئی نقصان نہیں بشرطیکہ اسکے ساتھ مجامعت نہ کی جائے اللہ نے کہا" اپنی بیویوں اور غلام عورتوں کے سوا( جو تمہارے دائیں ہاتھ کی جائیداد ہیں) اس معاملے میں، ان پر الزام نہ لگایا جائے۔ حاشیہ (1) کہتا ہے۔ دوسرے آدمی سے حاملہ ہوں نہ کہ اپنے موجودہ مالک سے۔ بخاری والیم 3 کتاب 34 سبق 113 کے بعد عدد 436 صفحہ 239-240 (وہی اتا بطور سابقہ) اور اتا ان غلام لڑکیوں کو دیکھنا نا پسند کرتا تھا جو مکہ میں بیچی جاتی تھیں۔ جب تک وہ ان کو خریدنا چاہتا تھا۔ بخاری ولیم 8 عدد 246 صفحہ 162۔ محمد سے غلام لڑکیوں کے بارے میں پوچھا گیا۔۔۔۔۔۔۔ یہ ٹھیک ہے صحیح مسلم والیم 2 کتاب 8 عدد 3377-3383-3388 صفحہ 734-735۔ اس کے برعکس، پرانے عہد نامے میں، جو آدمی کسی غلام سے صحبت کرتا ہے جو اس کی بیوی نہ ہوتی، مار دیا جاتا تھا۔ اسیروں کے ساتھ صحبت ٹھیک ہے صحیح مسلم والیم 2 کتاب 8 عدد 3371-3376 صفحہ 733، ابن ماجہ والیم 3 عدد 2517 صفحہ 52۔ غلام لڑکی سے صحبت ٹھیک ہے ابن ماجہ والیم 1 عدد 89 صفحہ52 ، والیم 3 عدد 1920 صفحہ 158، والیم 3 عدد 1927-1928 صفحہ 162، ابن ماجہ والیم 3 عدد 1851 صفحہ 117 بھی دیکھیں۔ ابو سعد نے کہا، الخدری نے محمد سے پوچھا بنو مستعلیق کی مہم کی موقع پر مجامعت میں سلسلہ توڑنے کے متعلق پوچھا تو محمد نے کہا نہیں ایسا نہیں کرنا چاہیے کیونکہ جان پیدا نہیں ہو گی جب تک اللہ حکم نہ کرے۔ موتاہ مالک 95۔32۔29۔ ابو ایابل انصاری نے مجامعت میں قطع فعل کیا موتاہ مالک 97۔32۔29۔ عبداللہ بن عمر نے مجومعت میں قطع فعل نہ کیا اور خیال کیا کہ یہ ناپسندیدہ ہے۔ موتاہ مالک 98۔32۔269۔ ابن فہد نے زید بن تھبت (ابو سعد)سے، غلام لڑکی سے مجامعت میں قطع فعل کے بارے میں پوچھا اس کی بیویوں میں سے کوئی بھی اس سے زیادہ خوش نہ ہوئی بہ نسبت اس کی کچھ غلام لڑکیوں کے۔ لیکن اسکی غلام لڑکیوں میں سے کوئی خوش نہ ہوئی کہ وہ ان سے کوئی بچہ پیدا کرنا چاہے۔ اسکو بتایا گیا کہ مجامعت میں قطع فعل ٹھیک ہے موتاہ مالک 99۔32۔29۔(غور کریں کہ غلام لڑکیاں بیویاں خیال نہیں کی جاتی تھیں) علی نے کہا ایک مرد کسی آزاد عورت سے مجامعت میں قطع فعل نہیں کرتا، جب تک وہ اسے اجازت نہیں دیتی۔ ایک غلام لڑکی سے اس کی اجازت کے بغیر مجامعت میں قطع فعل کرنے میں کوئی نقصان نہیں۔ کوئی مرد جو ایک غلام لڑکی جو بطور بیوی رکھتا ہے تو وہ اس کے ساتھ مجامعت میں قطع فعل نہ کرے جب اس کے لوگ اسے اجازت نہ دیں۔ موتاہ مالک 32۔29۔29۔ ابن عباس سے مجامعت میں قطع فعل کے بارے پوچھا گیا اور کہا کہ اپنی غلام لڑکی سے پوچھے۔ اس لڑکی نے قبول کیا پس اس نے کہا یہ ٹھیک ہے۔ اس نے خود یہ نہیں کہا تھا موتاہ مالک29۔12۔18۔ اسلام میں حتیٰ کہ اس کے لیے ایک خاص نقطہ ہے ایک اُم والد (یا اُم والد) ایک غلام لڑکی ہے جس نے اپنے مالک کا بچہ پیدا کیا۔ ابن ماجہ والیم 3 حاشیہ 1 صفحہ 257 ماریہ محمد کی ایک اُم والد تھی۔ الطبری والیم 13 صفحہ 58 کے مطابق۔ ایک اُم والد اپنے مالک کی وفات پر ماتم نہیں کرتی۔ صرف جن عورتوں کے خاوند ہیں وہ ماتم کریں۔ موتاہ مالک 108۔33۔29۔ وہ رات جس میں اسکی بیوی فوت ہوئی اتھمن اپنی غلام لڑکیوں میں سے ایک کے ساتھ رات گزار رہا تھا۔ شماء الرمزی سبق 45 عدد 6(310) صفحہ 332 مترجم کی تفسیر کے مطابق، غور کریں کہ وہ ایک دوسری بیوی نہ تھی۔ بلکہ ایک غلام لڑکی تھی۔ مسلمان اپنی غلام لڑکیوں کو بیویاں نہیں پکار سکتے ۔ اگر چار بیویوں سے زیادہ ہوں۔ کیونکہ قرآن (محمد کے سوا) مسلمانوں کو صرف چار بیویوں کی اجازت دیتا ہے۔ ایک غلا لڑکی اور اسکے مالک کے بچے کا ذکر ابن ماجہ والیم 3 عدد 2004 صفحہ 207 میں ہے۔ مسلمان غلام لڑکیوں کو لے سکتے تھے اگر وہ چاہیں خواہ زبردستی زنا کے لیے یا نہیں۔ پھر ایک شامی(ملک کا بندہ) آیا (جنرل موساب کے خیمے) میں داخل ہوا اور ایک غلام لڑکی لے گیا۔ وہ چلائی، افسوس ! میں لوٹی گئی(میری عزت گئی) موساب نے اسے دیکھا اور پھر اس پر کوئی توجہ نہ دی۔الطبری والیم 21 صفحہ 186۔

کب غلام لڑکی کے ساتھ صحبت ٹھیک نہیں

ایک مسلمان غلام لڑکی کے مالک کو غلام لڑکی کو برہنہ دیکھنے کی اجازت نہیں اگر اسکی شادی کسی کے ساتھ ہو گئی ہو۔ اس کے علاوہ ٹھیک ہے وہ اس کے ساتھ شادی نہیں کرتی، صرف مباشرت کے وقت اسکی ملکیت ہوتی ہے ابو داود والیم 1 عدد 496 اور حاشیہ 198 صفحہ 126۔ سعد بن الموسیاب نے کہا کہ اس غلام لڑکی سے مباشرت کرنا منع ہے جو کسی دوسرے سے حاملہ ہو۔ موتاہ مالک 21۔28۔ ایک آدمی جو کسی اپنی غلام لڑکی سے مباشرت کرے وہ اسکی بہن سے مباشرت نہیں کر سکتا جب تک پہلی غلام لڑکی اسکے لیے غیر قانونی نہ ہو جائے۔ چاہے وہ کسی شادی وغیرہ کرے۔ یا آزاد ہو۔ موتاہ مالک 35۔14۔28۔ یحیٰ نے مالک سے بیان لے کر مجھے بتایا کہ اس نے سنا کہ عمر ب خطاب (خلیفہ) نے ایک غلام لڑکی سے ایک بچہ پیدا کیا اور کہا اسے نہ چھونا، کیونکہ میں نے اسے برہنہ کر دیا ہے موتاہ مالک 36۔15۔28۔ مالک نے یحیٰ بن سعد سے کہا اور یحیٰ نے مجھ سے کہاکہ ابو نعشل ابن السعود نے کہا القاسم ابن محمد سے کہا، میں نے اپنی ایک غلام لڑکی کو چاند کی روشنی میں دیکھا پس میں اس پر بیٹھ گیا جیسے ایک مرد کسی عورت پر بیٹھتا ہےاس نے کہا کہ وہ حیض سے ہے۔ پس میں کھڑا ہو گیا اور اسکے قریب نہ گیا۔ کیا میں اپنے بچے کو پیدا کرنے کے لیے اس کے ساتھ مباشرت کر سکتا ہوں؟ القاسم نے اس کو منع کر دیا موتاہ مالک 37۔15۔28۔ یہ تمام اقتباسات مسلم کتابوں میں دستیاب ہیں۔ آپ خرید سکتے ہیں پس یہاں کوئی بات چھپی نہیں۔ اب، اگر تم نے ایک مسلمان سکول میں پرورش پائی ہے تو شاید تمہارے اساتذہ نے اسلام کے اس حصے کے بارے میں تمہیں نہ بتایا ہو۔ شاید جب تم نے اسلام کو ماننے کا فیصلہ کیا ہو، تمہیں ساری کہانی نہ بتائی گئی ہو۔ اور اسلام جھوٹے دعووں پر مشتمل ہے۔

قرآن میں بیویوں کے علاوہ ساتھی

اگر کوئی قرآن پڑھتا ہے (جیسے میں شروع سے آخر تک پڑھا ہے) تو اسکے کئی چیزیں سمجھ میں نہیں آ سکتیں اگر وہ اصطلاح کو نہیں جانتا۔ اب ہم وہ سمجھتے ہیں۔"وہ جو تمہارے دائیں کے قبضے میں ہے"کا مطلب۔ آؤ دیکھیں کہ قرآن صاف طور سے کیا بیان کرتا ہے۔ شادی شدہ عورتیں تمہارے لیے منع ہیں سوائے ان کے جو تمہارے دائیں ہاتھ کی ہیں۔ سورۃ 4: 24 وہ جو تمہارے دائیں ہاتھ کے قبضے میں ہیں کا ذکر سورۃ 16: 17 میں بھی ہے" مباشرت سے بچو، سوائے ان کے جو شادی کے بندھن میں بندھی گئی ہیں۔ (یا اسیروں سے) یا جو تمہارے دائیں ہاتھ کے قبضے میں ہیں کیونکہ (اس معاملے میں) وہ الزام سے بری ہیں سورۃ 23: 5-6۔ اور جو اپنی پاکدامنی کی حفاظت کریں (منع) سوائے اپنی بیویوں کے اور اسیروں کے جو تمہارے دائیں ہاتھ کے قبضے میں ہیں کیونکہ اسطرح وہ الزام سے بری ہیں سورۃ 70: 29-30۔ ان کے علاوہ زیادہ سے شادی کرنا جائز نہیں۔ "سوائے ان کے جو تمہارے دائیں ہاتھ کے قبضے میں ہیں" سورۃ 33: 52۔ سورۃ 33: 50۔ بھی دیکھیں۔ پس چار سے زیادہ ساتھی جائز نہیں۔ صرف وہ جو تمہارے دائیں ہاتھ کی جائیداد ہیں۔ قرآن سے یہ تمام اقتباسات "یوسف علی" کے ترجمے سے لی گئی ہیں۔ اور "اسیروں " کا لفظ عربی میں نہیں مگر ترجمے میں ہے۔ بظاہر ان کو جو تمہارے دائیں ہاتھ کے قبضے میں ہیں سے تصادم کو نرم کرنے کی کوشش ہے مگر سچائی یہ ہے کہ یہ اسیروں تک محدود نہیں۔

غیر مسلم غلام لڑکیوں سے صحبے ٹھیک لیکن غیر مسلم بیویاں منع ہیں

بت پرست عورتوں سے اسوقت تک شادی نہ کرو، جب تک وہ ایک سچی مومن نہ بن جائے۔ کیونکہ ایک مومن عورت، بت پرست عورت سے بہتر ہے۔ حتیٰ کہ مواخرالزکرکو تم بڑی خوشی بھی پاؤ۔ مزید براں، اپنی عورتوں کو بت پرست مردوں سے شادی کی اجازت نہ دو، جب تک وہ سچے مومن نہ بن جائیں کیونکہ ایک مومن بندہ، ایک بت پرست ست بہتر ہے حتیٰ کہ تم مواخرالزکر کو خوش کیوں پاؤ۔ سورۃ 2: 221 (اسلام میں خواتین صفحہ 33 سے اقتباسات) جب کبھی ابن عمر سے مسیحی یا یہودی عورت سے شادی کرنے کے متعلق پوچھا گیا اس نے جواب دیا حقیقت میں،اللہ نے بت پرست عورت کو سچے مومن کے لیے غیر قانونی بنایا ہے اور میں نہیں جانتا کہ بت پرستی میں کوئی چیز بری ہے۔ اس عورت کی نسبت جو یہ کہے کہ ہمارا خداوند یسوع مسیح ہے اگرچہ وہ (یسوع) صرف خدا کے بندوں میں سے ایک ہے) بخاری والیم 7 عدد 209 صفحہ 155-156۔ "اسلام میں خواتین" صفحہ 53 میں بھی یہ اقتباس ہے مالک نے کہا، ہماری رائے میں، اللہ نے مسلمان غلام لڑکیوں سے شادی جائز قرار دی ہے اور اس نے مسیحی اور یہودی غلام لڑکیوں سے شادی جائز نہیں بنائی۔ موتاہ مالک а38۔ 16۔28 [تاہم محمد نے مسیحی کلیسیا کی غلام لڑکی بنام مریم رکھی تھی پھر بھی محمد کم از کم دو فاحشہ (بیوی کے علاوہ) بھءی رکھیں تھیں جو مسلمان نہیں تھیں۔ مریم مسیحی اور ریحانہ بنت زید۔ اس نے کچھ غلام لڑکیاں بھی رکھی تھیں۔ بخاری والیم 7 عدد 274 صفحہ 210، ابو داود والیم 3 عدد 4458 صفحہ 1249 مثال کے طور پر سلمہ محمد کی کنواری نوکرانی تھی ابوداود والیم 3 عدد 3849 صفحہ 1084، الطبری والیم 39 صفحہ 181۔ الطبری والیم 12 صفحہ 202 بھی ذکر کرتی ہے کہ عمر محمد ہر بیوہ کو 1000 درہم دیتا رہا۔ لیکن محمد کی غلام لڑکیوں کو نہیں۔ تاہم بیویوں نے اصرار کیا کہ محمد کی غلام لڑکیوں کو بھی 1000 درہم ملنے چاہیے۔ مالک نے کہا میری رائے میں اللہ نے ایماندار( مسلمان) غلام لڑکیوں سے شادی جائز قرار دی ہے۔ اور اس نے مسیحی اور یہودی غلام لڑکیوں سے شادی جائز قرار نہیں دی۔ لوگوں کی کتاب سے (موتاہ مالک а38۔16۔28) تاہم، شاید محمد نے کبھی کسی کی بیوی سے مباشرت کی ہو۔ اس نے (محمد) جواب دیا اپنی بیویوں کے سوا اور غلام لڑکیوں کے سوا جو تمہاری جائیداد ہیں اپنے مضصوص حصے چھپا کر رکھو۔ ابوداود والیم 3 عدد 4006 صفحہ 1123۔

اسلام میں خواتین کو مارنا

بیویوں کو ماریا

" تم میں سے کوئی اپنی بیوی کو کہے مارتا ہے جیسے وہ اونٹ کو مارتا ہے اور پھر ہو سکتا ہے اس کے ساتھ ملے (سوئے)؟ اور حشام نے کہو جیسے وہ اپنے غلام کو مارتا ہے" بخاری والیم 8 عدد 68 صفحہ 42۔ قرآن سورۃ 4: 34 میں کیو ں کہتا ہے اپنی بیوی کو "مارو" کوڑے" سے مارو، اگر وہ نافرمان ہے؟ڈاکٹر بدوی صفحہ 25 پر تسلیم کرتا ہے کہ ایک نرمی سے انتظام کر سکتا ہے۔ تاہم، وہ یہاں لفظوں سے کھیل رہا ہے۔ عربی لفظ "مارنا"یا "کوڑے مارنا" کا مطلب نرمی سے تھپتھپانا نہیں ہے۔ یہ وہی لفظ ہے جو غصے سے مجرمانہ اونٹ کو مارنا ہے۔ سورۃ 4: 34 میں عربی لفظ عدرب ایک حرف عطف ہے ۔جس کا مطلب ہے مارنا، ضرب لگانا، یا چوٹ لگانا۔

کے مطابق۔ Hans wehr Dictionary of modern written Arabic P538

محمد نے خود عائشہ کو چھاتی ہر مارا جس سے اسے درد ہوئی۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 4 سبق 352 عدد 2127 صفحہ 462۔ اگر کوئی خاوند سست ہے تو قرآن کبھی نہیں کہتا کہ عورت اپنے خاوند کو مارے۔ حتیٰ کہ اگر خاوند مارنے میں مشہور ہے اس کو کچھ نہ کہا جائے۔ مصر میں ڈاکٹر بدوی کے ناول کی اتنی قدر نے رپورٹ دی کہ 1987 میں مصری عدالت نے The Guardin Weekly نہیں

قانون پاس کیا کہ خاوند کا فرض ہے کہ اپنی بیوی کو پڑھائے، اور اسلیے وہ جیسے چاہے اسے (بیوی کو) مار سکتا ہے۔

صفحہ 152 سے لیا گیا اُم کلثوم خلیفہ عمر سے شادی Voices behind the veil

نہیں کرنا چاہتی تھی کیونکہ "وہ ایک اُجڈ/ اکھڑ/ بے ہودہ زندگی گزارتا تھا اور عورتوں سے سخت رویہ رکھتا تھا"۔ الطبری والیم 14 صفحہ 101۔ عائشہ نے خیلفہ عمر کو واضح کیا تم اجڈ اور پھرتیلے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تم اُم کلثوم سے کیسے پیش آؤ گے اگر وہ کسی بات میں تمہاری نافرمانی کرے ۔ اور کیا تم اسے جسمانی سزا دو گے؟ الطبری والیم14 صفحہ 102۔ اسی طرح الطبری والیم 15 صفحہ 141 حاشیہ251۔ نے کہا کہ تمام خلیفہ سوائے عمر کے محمد کے خاندان سے تھے چونکہ محمد کا خیال تھا کہ وہ (عمر) اسکی بیٹیوں سے اتنما سخت ہے پس محمد نے سوچا کہ وہ اس کی بیٹیوں سے اتنا سخت ہے۔ لیکن وہ اسے دوسروں کے ساتھ سخت رویہ کو نہ روک پایا۔ابن ماجہ والیم 3 عدد 1850 صفحہ 116 میں یاک خاوند کی ذمہ داریوں کے متعلق بحث کہتی ہے کہ ایک خاوند اپنی بیوی کے چہرے پر نہیں مار سکتا یا اسے سرعام بد صورت نہیں کہہ سکتا یا اس کی روپے پیسے کی مدد بند نہیں کر سکتا۔ ابوداود والم 2 عدد 2137 صفحہ 574، والیم 2 عدد 2138-2139 صفحہ 574-575۔ ان تمام حوالہ جات میں چہرے پر مارنا مبرا قرار دیا گیا ہے۔ عورت کو مارو لیکن شدید نہیں۔ اگر وہ تمہارے نا پسندیدہ شخص کو بستر پر لیٹنے کی اجازت دیں تو ۔ابو داود والیم 2 عدد 1900 صفحہ 505۔ معاویہ اور ابو جہم دونوں نے فاطمہ بنت قیس سے شادی کا پوچھا۔ ابو جہم اپنے کندھے سے چھڑی نیچے نہ رکھتا تھا۔ ابو داود والیم 2 عدد 2277 صفحہ 619-620۔ محمد کو اس بات کا پتہ چلا اور اس نے کبھی ایسا نہ کیا اس نے ابوجہم کی سرزنش کی۔ مسلمان مورخین کے مطابق الطبری حکم بیان کرتا ہے کہ اپنی بیوی کو مارو الطبری والیم 2 صفحہ 140۔ آج مصر اور لیبیا کے مجموعہ قوانین آرٹیکل 212 کہتا ہے کہ اگر ایک عورت اپنے خاوند کی نافرمانی کرتی ہے۔ تو خاوند مقامی جج کو شکایت کر سکتا ہے۔ عدالت سختی سے تکمیل کرواے اگر صورتحال ایسی ہی ہو۔ تو فوج سے گھر محصور کر دیا جائے۔ اگر ضرورت پڑے تو جج مندرجہ زیل ہدایات استعمال کر سکتا ہے۔ مزید معلومات کے لیے

Why I am not a Muslim

صفحہ 314۔ عائشہ نے کہا: حبیبہ ساحل کی بیٹی تھیبت بن قیس بن شمس کی بیوی تھی ۔ اس نے اسے مارا اور اس کا کوئی عضو توڑ دیا۔ پس وہ صجح کو محمد کے پاس گئی اور اپنے خاوند کے خلاف شکایت کی۔ نبی نے تھابت بن قیس کو بلایا اور اس سے کہا کہ اس کی جائیداد کا ایک حصہ لے کر اس سے الگ ہو جاؤ۔ اس نے پوچھا کیا یہ ٹھیک ہے؟ نبی نے کہا: ہاں اس نے کہا مجھے پودینے کے دو باغ بطور جہیز دیئے گئے ہیں وہ پہلے ہی اس کے پاس ہیں۔ نبی نے کہا ان کو لے لو اور اس سے جدا ہو جاؤ۔ غور کیجیے کہ آدمی نے باغ واپس لے لیے اپنی بیوی کو مارنے کے بعد اور اس کے اعضا توڑنے کے بعد بھی۔ ابوداود والیم 2 عدد 2220 صفحہ 600۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ بیویاں اپنے خاوندوں کی فرمانبرداری کریں۔ اگر وہ اپنے خاوندوں کی فرمانبردار نہیں کرتیں یا وہ اپنے خاوند کے آگے دلیر ہو جاتیں ہیں تو انہیں تبلیغ کر کے اور تعلیم سے سیدھی راہ پر لائیں۔ مارنا آخری ہتھیار ہے۔ لیکن جہاں تک ممکن ہو سکے مارنے سے بچو۔ ابوداود والیم 2 حاشیہ 1467 صفحہ 575۔ ایک آدمی گیا اور اپنی غلام لڑکی (لونڈی) سے مباشرت کی اور اپنی بیوی کے پاس گیا اور اس کا دودھ پیا۔ اس کے بعد اسکی بیوی نے اسے خبردار کیا کہ وہ زیادہ عرصے تک ایسا نہیں کر سکتی جو اس نے کیا۔ پس وہ آدمی عمر کے پاس گیا اور عمر نے اسے بتایا کہ اپنی بیوی کو مار اور اپنی لونڈی کے پاس چلا جا کیونکہ وہ چوسنا صرف نوجوان کا۔ موتاہ مالک 13۔2۔30۔ قرآن میں تبدیلی:" یحیٰ نے مجھے بتایا، مالک سے عبداللہ بن ابی بکر بن حازم سے آمرہ بنت عبدالرحمٰن، نے کہا کہ عائشہ محمد کی بیوی نے کہا: وہ جو تمہارے درمیان قرآن آتارا گیا، وہ تھا دس مشہور دودھ پیتی حرم نے بنایا۔ پھر یہ تر ہو گیا پانچ مشہور دودھ پیتی حرموں کے ذریعے۔ جب اللہ کا رسول فوت ہوگیا۔ یہ تھا جو اب قرآن تلاوت ہوتا ہے۔ ایک آدمی جات اور اپنی غلام لڑکی سے مباشرت کرتا اور اپنی بیوی سے اس کا دودھ پیا۔ اس کے بعد اسکی بیوی نے اسے خبردار کیا کہ وہ زیادہ دیر تک یہ نہیں کر سکتی پس وہ آدمی عمر کے پاس گیا۔ عمر نے اسے کہا اسے مار اور غلام لڑکی کے پاس چلا جا کیونکہ دودھ پینا صرف نوجوان لڑکی کا۔ موتاہ مالک 17۔3۔30۔

جنوری 2004 میں شریک اخبار، مار رومن میں، ایک مسلمان امام کو، فینگیرولہ سپین میں، محمد کمال مصطفیٰ کو 2735 ڈالر اور 15 مہینے معطل شدہ سزا دی گئی کیونکہ اس نے کتاب لکھی اور تقسیم کی (خواتین اسلام میں) جو ترغیب دیتی تھی خاوند اپنی بیوی کو ان کے ہاتھوں اور پاؤں پر پتلی اور ہلکی چھڑی سے ماریں۔ اسطرح ان بدنوں پر نشان یا ہلکا زخم نہیں لگے گا۔ امام نے دلیل دی کہ وہ قرآن کے پیرا گراف کی تشریح کر رہا تھا۔ اور کہا کہ وہ تشدد کے خلاف ہے۔ عمر بن الخطاب کا بیان ہے نبی پاک کہتے: آدمی سے نہیں پوچھا جائےگا کیہ وہ اپنی بیوی کو کیوں مارتا ہے ( 4168) ابوداود والیم 2 عدد 2142 صفحہ 575۔ یہ کم از کم مردوں کے لیے تسلی بخش ہو سکتا ہے ۔ اس کا مطلب ہے کہ مرد اپنی بیوی کو درست کرنے کے لیے بہترین کوشش کرتا ہے لیکن وہ ایسا کرنے میں ناکام ہوجاتا ہے۔ آخری حربے کے لیے اسے اپنی بیوی کو مارنے کی اجازت ہے۔ اس روایت کا یہ مطلب نہیں کہ خاوند اپنی بیوی کو بغیر کسی وجہ کے مارے۔ اگر وہ اسے کسی غلطی کے بغیر مارتا ہے وہ ذمہ دار ہو ھا اور جواب دہ ہو گا۔ ابوداود والیم 2 حاشیہ 1468 صفحہ 375 دوسرے لفظوں میں بعد میں شامائل ترمذی سبق 47 عدد 6(331) صفحہ 366 کہتی ہے۔ محمد نے جنگ کے سوا کسی کو کبھی نہ مارا۔ جبکہ بائبل بچوں کو نظم و ضبط سکھانے کا ذکر کرتی ہے۔ یہ کبھی بھی بیوی یا خاوند کو نظم و ضبط سکھانے کے لیے مارنے یا ضرب لگانے کاکبھی بھی ذکر نہیں کرتی۔

خلاصہ

اسلام شادی تعلقات

غیر مسلم خواتین مسلمانوں کو بطور بیوی مباشرت ٹھیک ہے اگر غلام

اجازت نہیں لڑکیاں ہوں یا اسیر یا فاحشہ

عورتیں

مسلم خواتین غیر مسلم خاوند منع ہیں مار سکتے ہو، لیکن غلاموں کی طرح نہیں۔

 

آخری انتباء

ابرہام لنکن سے ایک دفعہ پوچھا گیا "اگر تم دُم کو ٹانگ کہو تو ایک کتے کی کتنی ٹانگیں ہوں گی؟" جب کسی نے کہا "پانچ" لنکن نے کہا یہ غلط ہے کیونکہ ایک دُم کو ٹانگ کہنے سے وہ ٹانگ نہیں بن جاتی۔ محض کیونکہ دنا کا ایک بڑا مذہب کہتا ہے خدا سکھاتا ہے کہ عورتوں کو مارنا، غلاموں کے ساتھ مباشرت اور اسیروں کے ساتھ زائد ازدواجی تعلقات قائم کرنا درست ہے اسکو ایسا نہیں بناتا۔ یہ افعال برے ہیں اور ان کی منظوری نہیں دینی چاہیے۔ حتیٰ کہ جب اسلام کی مزہبی کتابیں بھی اس کی منظوری دیں۔ محمد اور احادیث کے کلمات کی طرف والپس آئیں کہ بائبل میں حقیقتاً خدا نے کیا کہا۔

تم یہاں سے کہاں جاتے ہو؟

خدا عقل و فہم سے بالا نہیں۔ تمہیں کائنات کے خالق کے سامنے جھکنے کی ضرورت ہے جو آپ چاہتا ہے کہ اسے بطور باپ جانیں، اور سچے خدا کی تعلیم کی پیروی کرنے کے لیے ارادہ کریں۔ خدا مکمل طور پر اپنے لوگوں کو ترک نہیں کرتا۔ خدا نہیں چاہتا کہ اس کے پیروکار شیطان کی تعلیمات پر یقین رکھیں۔ پس یہ کہہ کر خدا کی توہین نہ کریں وہ اپنے کلام کو بھولا نہیں۔ یا اس نے موسیٰ اور یسوع کی تعلیمات کو بگاڑنے کی اجازت نہیں دی۔ اور جو خدا نے اپنے پیروکاروں کو دیا اسے جھوٹ سے خراب کیا جائے جو وہ ماضی میں کر سکے۔ گناہ کا یہ مطلب نہیں کہ صرف تھوڑا سا اوپر کھسکنا۔ تمہیں توبہ کرنے کی ضرورت ہے کہ تم خدا کی تعلیم اور احکام کی طرف واپس مڑ گئے ہو۔ نہ صرف تم نے غلط کام کیے ہیں بلکہ تم اچھی چیزیں کرنے میں ناکام ہو گئے ہو۔ نہ صرف ہمارے افعال غلط ہوئے ہیں بلکہ لوگ ہم سے نفرت کرتے ہیں۔ شہوت اور لالچ ہمارے دلوں میں تھا۔ خدا سے کہیں کہ وہ آپ کی زندگی میں آئے۔ اور تمہیں ایک نیا صاف دل دے کہ تمہارتے ذہن کو تبدیل کر دے۔ الفاظ کو اور کاموں کو تبدیل کر دے۔ پھر تم کہنا بند کردو گے کہ تمہیں کرنے کی ضرورت نہیں بجائے اسکے کہ تم اسکے ساتھ چل سکتے ہو۔ قدرے، تم ہر وہ کام کرنا چاہتے ہو، تم خدا کو خوش کرنا چاہتے ہو۔ ہر ایک کے لیے یسوع صلیب پر مر گیا۔ کیونکہ وہ حقیقتاً صلیب پر مر گیا۔ خدا نے اپنے پیروکاروں سے صدیوں سے جھوٹی تعلیم سے مذاق نہیں کیا۔ یسوع کی وفات ایک شکست نہ تھی بلکہ جس کے ذریعے یسوع میدان جنگ میں آگے آیا اور شیطان کو اسکی سلطنت جہنم میں شکست دی۔ یسوع فتح کے بعد جسمانی طور پر مردوں میں سے، خدا کی علامت کے طور پر زندہ ہو گیا۔ تم زیادہ دیر تک یسوع کے کلام کو نظر انداز نہیں کر سکتے۔ اس نے سکھایا کہ وہ صرف نبی نہیں تھا۔ صرف ایک ہی خدا ہے بلکہ یسوع نہ ضدا ہونے والے خدا کا ایک امتیازی حصہ ہے۔ یسوع کو اپنا مالک پکاریں، اس کی پوجا کریں، جیسا کہ رسولوں اور اسکے دوسرے پیروکاروں نے کی، اور اسکی گناہوں سے معافی کو قبول کریں۔ خدا سے بالکل دعا کریں کہ وہ تم پر سچائی ظاہر کرے اور تمہاری زندگی میں آئے اور تمہیں ابدی زندگی دے۔ تمہارے پاس اب تک ہو سکتا ہے ک۴ی سوالات ہوں، اور یہ درست ہے ہم سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پر رابطہ کریں۔ اور ہم ان سوالات کے جوابات دینے میں خوش ہوں گے

اسلام حقیقت میں عورتوں کے بارے میں کیا کہتا ہے؟

جمال بدوی کے کتابچے پر تبصرہ / تنقید

اسلام میں جنسی داد رسی (حصہ سوم)

نقاب کرنے والی خواتین/ پردہ کرنے والی خواتین، بے پردہ زندگی کے بعد، اور نقاب کرنے والا قرآن۔

عورتوں کو عام تھپڑ مارنا

ڈاکٹر بدوی صفحہ 25 پر کہتا ہے حقیقیت میں قرآن میں خاندانی تشدد یا جسمانی تشدد کی حوصلہ افزائی، اجازت یو معافی نہیں ہے۔ تاہم، محمد نے خود اسکو کئی دفعہ برداشت کیا۔ اس سے پہلے کہ ہم آگے جائیں ہمیں یہاں کچھ کہنے کی ضرورت ہے کہ یہ آج خاص طور پر باموقع ہے۔ برطانیہ، بھارت اور دوسرے ممالک میں کچھ مسلمان، ان ممالک کے مسلمانوں کو، مسلم شریعت کی طرف مائل کرنا چاہتے ہیں۔ نہ کہ قومی قانون کی طرف۔ عورتوں کو مارنا، شریعتی طور پر قانونی ہے۔ دوسرے الفاظ میں فاطمہ بنت قیس کو اس کے خاوند سے طلاق ہو گئی۔ اور اسے شادی کے لیے تین پیش کشیں ہوئیں۔ معاویہ سے ، ابو جہم سے، اور اسامہ بن زید سے۔ محمد نے ذکر کیا کہ معاویہ غریب ہے اور اسکی کوئی جائیداد نہیں، ااور جہم عوتوں کو بہت مارتا ہے صحیح مسلم والیم 2 کتاب 8 نمبر 3526 صفحہ 772 چے ابن ماجہ والیم 3 نمبر 1869 صفحہ 129 بھی دیکھیے۔ غور کریں دونوں حوالوں میں محمد نے خود عوامی طور پر پہچانا کہ وہ جانتا تھا کہ ابو جہم عورتوں کو بہت مارتا ہے مگر ابو جہم کو سزا نہ دی گئی۔ نہ ہی اسے رکنے کے لیے کہا گیا۔ بخاری والیم 7 عدد 132 صفحہ 101 کہتی ہے اپنی بیویوں کو اپنے غلاموں کی طرح نہ مارو۔ اور ان کے ساتھ پھر سو جاؤ۔ یہ خاص بات نہیں کہ آیا کہ غلام مرد ہوں یا عورتیں۔ کیونکہ کسی دوسرے موقع پر (ابن ماجہ والیم 3 عدد 983 صفحہ 194) محمد نے اپنی بیویوں کو غلاموں کی طرح مارنے والے مسلمانوں پر تنقید کی۔ اگر کسی بیوی کی زبان گندی ہو (گستاخ) محمد نے اسے طلاق دینے کا مشورہ دیا جب کسی آدمی نے کہا ،بچے بھی ہیں تو محمد نے کہا اسے کہیں کہ اسکی (خاوند) کی فرمانبرداری کرے۔ توہم اسے غلام لڑکیوں کی طرح نہ مارو۔ ابوداود والیم1 عدد 142 صفحہ 35۔ پھر بھی ابن ماجہ (بہت کم مستند چھ مشہور احادیث کا مجموعہ) کے مطابق، عائشہ نے کہا کہ محمد نے اپنے خدمت گزار یا بیوی کو کبھی نہ مارا۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 1984 صفحہ 194۔ کیا حادیث میں اختلاف ہے کہ عورتوں کو مارتا اور نہیں مارتا تھا؟ لازمی نہیں۔ اگر عائشہ اسکی حفاظت نہ کرتی تو ہو سکتا ہے مندرجہ ذیل واقعہ سے پہلے کہا جاتا۔

کے بیٹے کا بیان ہے ایاس بن ، عبداللہ ابو دھو باب : Flip Flop on beating

کہ اللہ کے رسول نے کہا "غلام لڑکیوں (عورتوں) کو نہ مارو"۔ پھر عمر نبی پاک سے ملا اور کہا "اللہ کے رسول عورتیں اپنے خاوندوں سے جری بن گئیں ہیںپس ہمیں ان کو مارنے کی اجازت دے جائے۔ پس انہوں نے (جب اجازت کی منظوری ہو گئی)عورتوں کو مارا۔ اس پر عورتوں کے بہت سے گروپ محمد کے خاندان کے پاس گئے۔ جب صبح ہی تھی تو اس (محمد) نے کہا اس رات ستر عورتیں محمد کے خاندان کے پاس گئیں ہر عورت نے اپنے خاوند کے خلاف شکایت کی تمہیہں ان میں سے کوئی اچھا نہیں ملے گا۔ (حاشیہ کہتا ہے ان مردوں کی طرف اشارہ کرتا ہپے) غور کریں کہ امن (اطمینان) جو فرضی طور پر محمد پر تھا ظاہری طور پر بیویوں اور غلام لڑکیوں کو ملا جو مارنے کے خلاف شرعی طور پر بیان ہے ۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 1985 صفحہ 194-195۔ آؤ ایک اور حدیث میں سے اس پر غور کریں" ایاس بن عبداللہ بن ابی دھوب کا بیان ہے اللہ کے رسول نے کہا۔ اللہ کے ہاتھوں کی کنواریوں کو نہ مارو۔ لیکن جب عمر اللہ کے رسول کے پاس آیا اور عورتیں خاوندوں سے جری ہو گئیں ہیں۔ اس (نبی) نے عورتوں کو مارنے کی اجازت دی۔ پھر بہت سی عورتیں اللہ کے رسول کے خاندان کے پا س آئیں اور اپنے خاوندوں کے خلاف شکایات کرنے لگیں۔ پس اللہ کے رسول نے کہا کئی عورتیں اپنے خاوندوں کے خلاف شکایت کرتے ہوئے محمد کے خاندان کے پاس گئیں۔ وہ تمہارے درمیان اچھے نہیں ہیں۔ (1467) ابوداود والیم 2 عدد 2141 صفحہ 575۔ ایک رات عمر نے ایک دعوت کا انتظام کیا۔ جب آدھی رات تھی وہ جاگ اٹھا اور مارنے کے لیے اپنی بیوی کی طرف گیا۔ میں نے دونوں کو الگ کر دیا۔ جب وہ اپنے بستر کی طرف گیا تو اس نے مجھے کہا "اے آشاتھ مجھ سے ایک بات محفوظ کر لو جو میں نے اللہ کے رسول سے سنی (یہ چیزیں) ایک مرد کو اپنی بیوی کو مارنے کی اجازت نہیں ہو گی (معقول وجوہات کے لیے) اور وتر نماز پڑھے بغیر نہ سوؤ۔ میں تیسرا وعظ بھول گیا"۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 1986 صفحہ 195۔ غور کیجیے کہ (معقول وجوہات پر) ایک قابلیت ترجمہ میں شامل کی گئی ہے یہ عربی میں نہیں ہے۔ حتیٰ کہ بہت بری باتیں محمد نے خود اپنی بیویوں کی برداشت کیں۔ ابو بکر اور عمر محمد کے خیمے میں آ گئے اور اللہ کے رسول کو افسردہ اور اپنی بیویوں کے ساتھ خاموش بیٹھے پایا۔ اس (عمر) نے کہا کہ میں کچھ کہوں، جس سے نبی پاک ہنس پڑے ۔پس اس نے کہا اللہ کے رسول، میں چاہتا ہوں تم نے خریجا کی بیٹی کو دیکھا جب تم نے مجھ سے کچھ رقم مانگی اور میں اٹھ پڑا، اور اسکی گردن پر تھپڑ مارا۔ اللہ کے رسول ہنسے اور کہا وہ میرے ارد گرد ہیں جیسا تم دیکھتے ہو۔ زیادہ رقم مانگتی ہوئیں۔ پھر ابو بکر اٹھا اور عائشہ کے پاس گیا اور اسکی گردن پر تھپڑ مارا۔ اور عمر نے حصفہ کے سامنے کھڑا ہو کر یہ کہتے ہوئے اسے تھپڑ مارا تم اللہ کے رسول سے پوچھو جس کا وہ مالک نہیں۔ انہوں نے کہا اللہ کی قسم ، ہم اللہ کے رسول سے اس چیز کے لیے نہیں پوچھتیں جو کا وہ مالک نہیں پھر وہ (محمد) ان سے 29 دنوں تک جدا رہا۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 8 نمبر 3506 صفحہ 763 ۔ جب ایک عورت خیال کرتی ہے کہ اسے مدد کے لیے مزید رقم دے جائے۔ حتیٰ کہ وہ غلط ہو کیا یہ طریقہ ہے کہ عورتوں کو تھپڑ مار کر ان سے سلوک کیا جائے؟ پس ابر بکر نے مجھے (عائشہ) ہدایت کی اور کہا اللہ نے جو اس کہنے کے لیے خواہش کی اور مجھے اپنے ہاتھ میری کوکھ پر مارا۔ درد کی وجہ سے مجھے کوئی چیز حرمت دینے پر روک نہ سکی مگر اللہ کے رسول کی حالت میرے ران پر، جب تڑکا ہوا تو اللہ کا رسول اٹھ پڑا۔۔۔۔۔"بخاری والیم 1 عدد 330 صفحہ 199۔زبر بکرنے جان بوجھ کر عائشہ کو کہنی ماری ، جب اس کا کنگن گم ہو گیا اور کارواں پکڑا۔ - سنن نساء والیم 1 نمبر 313 صفحہ 259 والیم 1 نمبر 317 صفحہ 261 ، والیم 1 نمبر 326 ، صفحہ 267 ، ہم زیادہ زور نہیں دے سکتے۔ کہ مسیحیوں کے لیے یہ ٹھیک نہیں کہ وہ عورتوں کے تھپڑ ماریں۔

نقاب اور تھوڑی علیحدگی

ڈاکٹر بدوی کہتا ہے حجاب ضروری ہے لیکن وہ مکمل طور پر حجاب کے پر ہے۔ مسلمان آج ظاہری طور پر کم از کم حجاب کے Sidesteps جوش نفاذ کی

متعلق تین خیالات رکھتے ہیں۔ کئی جگہوں پر مسلمان عورتیں اپنے چہرے ڈھانپنے کے لیے نقاب کرتی ہیںیا پنے پورے جسم سوائے آنکھوں کے، ڈھانپنے کے لیے برقعہ استعمال کرتیں ہیں۔ بہت سورے جو جدید یا "نئے اسلام" کی پیروی کرتے ہیں۔ وہ اپنے آپ کو نہیں ڈھانپتیں۔ ایک تیسرا خیال جس کی شہادت ملی، مصر سے روانہ ہوتے ہوئے جہاز، مشرق وسطیٰ میں مکمل طور پر حجاب ہے لیکن حجاب ہٹانے کے لیے، مغربی لباس ظاہر کرنے کے لیے ایک بار منصوبہ ابھی غیر مکمل ہے۔ لیکن ہمرا مطلب مسلمانوں کے درمیان مختلف خیال بیان کرنا نہیں، بلکہ احادیث سے یہ دیکھنا کہ محمد نے حقیقتاً کیا سکھایا اور ابتدائی مسلمانوں نے جو عمل کیا۔

حجاب ضروری ہیں

احادیث بیان کرتیں ہیں، کہ حجاب تمام مسلمان عورتوں کے لیے ہیں۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 7 نمبر 2789 صفحہ606-607۔ میں ایک مسلمان عورت سے پوچھا کہ وہ مسلمان روایتی لباس پہنے ہوئے ہے۔ وہ نقاب/حجاب کیوں نہیں پہنے ہوئے۔ اس کا ایمان تھا کہ حجاب پسند کیے جاتے ہیں لیکن ضروری نہیں۔ تاہم احادیث میں "۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ اس عورت کی نماز قبول نہیں کرتا، جو بالغ ہے اور نقاب نہیں کرتی

ابوداؤد والیم 1 نمبر 639 صفحہ 168 ، وہ قانون جو ایک کو اپنا چہرہ ڈھانپنا ضروری سمجھتا ہے اس میں یہ بھی شامل ہے کہ وہ اپنے ذاتی اعضاء / حصے ڈھانپ کر رکے۔ ابوداؤد والیم 2 حاشیہ 2749 صفحہ 835 ۔ سب سے انوکھی بات یہ کہ غلام خواتین کے لیے نقاب ضروری نہیں۔ نئیں صحیح مسلم والیم 2 کتاب 8 نمبر 3325 ، 3328 صفحہ 721 722 بخاری والیم 7 کتاب 62 سبق 13 نمبر 22 صفحہ 14 ،ظاہراً نقطہ یہ نہیں تھا کہ مردوں کی آزمائش ہے بلکہ عورتوں کا شرم وحیا تھا جب محمد نے صفیہ کو لیا تو دوسرے مسلمان دیکھنے کے لیے انتظار میں تھے کیا وہ اسے نقاب کے لیے کہے گا اگر وہ (صفیہ) اس کی باقاعدہ بیوی بنے تو۔ یا حجاب کے بغیر جیسے آشنا عورتوں کے ساتھ یا جنسی اسیروں کے ساتھ ہوتا ہے۔ اسے نقاب کروایا گیا۔ اور اسے باقاعدہ بیوی بنا لیا۔ بخاری والیم 4 نمبر 143 صفحہ 92 ۔ جب عورتوں کے پردے کا حکم آیا ۔ عائشہ محمد کی بیوی کا بیان ہے کہ عمر بن الخطاب کہا کرتے تھے کہ اللہ کے رسول اپنی بیویوں کو پردہ کرنے دو لیکن وہ ایسا نہیں کرتے تھے ۔نبی کی بیویاں رات کو فطرت کے حکم کا جواب دینے کے لیے صرف المناسی پر جایا کرتی تھیں۔ ایک دفعہ سیعدہ زمہ کی بیٹی باہر گئی وہ ایک لمبی خاتون تھی۔ عمر بن الخطاب نے اسے دیکھا جب وہ ایک مجمع میں تھا اور کہا ،اے سعدہ میں نے تم کو پہچان لیا تھا۔ اس نے کہ ابس جیسا وہ کچھ پردے کے متعلق( عورتوں کا پردہ) احکامات کے لیے پریشان تھا۔ پس اللہ نے پردے کے متعلق آیت نازل کردی (الحجاب آنکھوں کے سوا مکمل جسم ڈھانپنا) بخاری والیم 8 عدد 257 صفحہ 170۔ دلچسپی سے ،یہ ٹھیک ہے کوئی عورت کسی دوسرے کے گھر ٹھہرے بشرطیکہ وہ اندھا ہے۔ ابوداؤد والیم 2 نمبر 2282 2283 صفحہ 621- یہ حتیٰ کہ عورتوں کے لیے ٹھیک ہے کہ اپنے آپ کو شادیوں میں متلاشیوں کے لیے سنواریں۔ ابو داود والیم 2 عدد 2299 صفحہ 627-628۔ ایک آدمی کو عورت کو دیکھنا چاہیے جو شادی کرنا چاہے تاکہ ہم آہنگی پیدا ہو۔ ابن ماجہ والیم 3 نمبر 1865 صفحہ 126۔ اسی طرح، عورت کے چہرے پر شادی سے پہلے نظر کرنا اچھا ہے۔ ابوداود والیم 2 عدد 2077 صفحہ 551۔ بائبل میں پردے کا بیان ہے مگر ایک بہت مختلف انداز میں۔ 2کرنتھیوں 3: 18 کہتا ہے "مگر جب سے کے بے نقاب چہروں سے خداوند کا جلال اسطرح منعکس ہوتا ہے جس طرح آئینہ میں تو اس خداوند کے وسیلے سے جو روح ہے ہم اسی جلالی صورت میں درجہ بدرجہ بدلتے جاتے ہیں"۔

حجابوں کی اہمیت۔ بے نقاب عورتوں کو نشانہ بنانا

آج افغانستان میں، حتیٰ کہ طالبان کے باہر نکالے جانے کے بعد بھی، عورتوں کو گالی دی جاتی، پریشان کیا جاتا اور دھمکایا جاتا ہے۔ ہیومن رائٹس واچ کی رپورٹ کے مطابق " ہم انسانوں کی طرح رہنا چاہتیں ہیں" (52 صفحات) ذریعہ دی ڈیلاس مارننگ نیوز 2002/17/12۔ یہ اسوقت ہوتا جب ان کو برقعے کے بغیر پکڑا جاتا۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 7 نمبر 2789 صفحہ 606 607 ۔ عائشہ اپنے رشتہ دار عبدالرحمن بن ابو بکر کے ساتھ اونٹ پر تھیاور اس نے اپنا نقاب اتار دیا، چونکہ خالی صحرا میں ارد گرد کوئی نہیں تھا۔ "۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے اپنا ڈھانپا ہوا سر اٹھایا اور گردن تک پردہ ہٹا دیا اس نے اونٹ کو مارتے ہوئے، میرے پاؤں پر ٹھوکر لگائی۔ میں نے اسے کہا کیا تم نے یہاں کسی کو دیکھا؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔" حاشیہ 1648 کہتا ہے عائشہ کا کیسا مطلب ہے کہ یہ تنہائی ہےاور یہاں کوئی نہیں جس سے اسے پردہ کرنا پڑے۔ تاہم عبدالرحمن بڑا بیدار تھا اور اسکو ڈر تھا کہ کوئی ناگہانی طور پر ظاہر نہ ہو جائے اس سوال کو کہ 'کیا جب کوئی ارد گرد نہ ہو پردہ کرنا چاہیے' کو ایک طرف چھوڑ کر، یہاں تین باتیں قابل غور ہیں۔

1)جب لوگ ارد گرد ہوں تو اسے (عورت) پردہ کرنا چاہیے۔

2) اسکو مارنا جائز ہے۔

3)اسے مارنے پر ،پہلے کوئی تنقید نہیں اور واضح کرتے ہوئے کیوں اس کے بعد اسے مارا گیا۔

گھر سے باہر ایک بے پردہ عورت کو اس کا خاوند شدید مارے۔ صحیح مسلم والیم 4 کتاب 24 نمبر 5557 صفحہ 1313 "آدمی نے اپنا ہتھیار اٹھائےاور گھر واپس آ گیا۔ اور اس نے اپنی بیوی کو دو دروازوں کے درمیان کھڑے پایا وہ اس کی طرف مڑا، حسد سے اسے مارا اور اسے زخمی کرنے کے لیے اس کی طرف نیزہ مارا۔ اس نے کہا، اپنا نیزہ دور رکھ اور گھر داخل ہونے پر تم دیکھو گے کہ میں کیوں باہر آئی۔ وہ گھر داخل ہوا اور بستر پر ایک بڑے سانپ کو کنڈل ڈالے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔" ابو داؤد والیم 3 نمبر 5237 38 صفحہ 1448 1449 اور موتاہ مالک 33۔12۔54 بھی دیکھو۔ نائجیریا میں ایک غیر مسلم عورت گلی میں جا رہی تھی جہاں گلی کی دوسری طرف ایک مسجد تھی۔ مسجد میں عبادت ابھی ختم ہوئی تھی۔ اور جب لوگ باہر آئے، تو انہوں نے اس پر حمہ کر دیا۔ جدید مسلم غلط ہیں۔ عورتوں کے حجاب اور تنہائی مردوں سے مسلمان معاشرے میں آج ضروری ہے۔ ابوداؤد والیم 1 ترجمہ حاشیہ 596 صفحہ 267۔

محمد سے پہلے عربی حجاب

جیسا کہ ایک اور نوٹ میں کہ محمد کے دیئے گئے عربوں کو حجاب کوئی نئی چیز نہیں طرطلیان کی تقریر 200-240ء میں ذکر ہے کہ عربی بت پرست عورتیں آنکھوں کے سوا اپنے پورے جسم کو ڈھانپتی تھیں۔"کنواریوں ک ے حجاب پر" باب 9 صفحہ 37۔

خواتین گھر میں تنہا

حجاب کے برعکس ڈاکٹر بدوی صفحہ 32 پر نبوت کے وقت عورتوں کے مکمل تنہائی کے متعلق کہتے ہوئے کھڑا ہوتا ہے کہ مکمل تنہائی نفرت انگز تھی اس کے علاوہ وہ کہتا ہے۔ صدیوں کے اسلامی فلسفہ قانون کی ہمیشہ پیروی نہیں کرنی چاہیے اور تنہائی کے دعوے اور گھر کو نہ چھوڑنا اسلامی نہیں ہیں۔ جبکہ ابتدائی اسلام نے مکمل تنہائی کی تبلیغ نہیں کی۔ یہ سکھایا گیا کہ عورت کو تین دن کے سفر پر اس وقت تک نہیں جانا چاہیے جب تک اس کے ساتھ کوئی قریبی رشتہ دار (محرم) نہ ہو۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 7 نمبر 3096 3098 ، 3110 صفحہ 675 676 ۔ غیر محرم عورت ایک دن سے زیادہ سفر کے لیے نہیں جاسکتی۔ ابن ماجہ والیم 4 نمبر 2899 صفحہ 220 کے مطابق- نبی نے صاف صاف منع کردیا کہ ایک عورت اپنے خاوند یا محرم کے بغیر دو دن کے سفر پر نہ جائے- صحیح مسلم والیم 2 کتاب 7 نمبر 3099 3100 صفحہ 676۔ ایک طلاق شدہ عورت کسی وقت بھی گھر سے باہر نہیں جاسکتی۔ ابوداؤد والیم 2 نمبر 1605 1606 صفحہ 622۔623۔ تاہم اصلی اسلام مکمل طور پر نامناسب نہیں تھا۔ یہ کہا جاتا کہ مسلمان عورتیں اپنے گھروں میں پابند ہیں۔ صرف عیدی تہواروں پر باہر نکل سکتیں ہیں۔ ابن ماجہ والیم 2 نمبر 1307 08 صفحہ 277 ۔ ایک مرد ضرورت کے سوا کسی عورت سے گفتگو نہیں کر سکتا۔ صحیح مسلم والیم 4 حاشیہ 2964 صفحہ 1442 یہ کہا گیا کہ محمد نے کبھی کسی عورت کے ہاتھ کو نہ چھوا۔ ابن ماجہ والیم 4 نمبر 2874 2875 صفحہ 204-205۔ دوسرے الفاظ میں، ایتھوپیا کی ایک جوان لڑکی نے محمد کو بہت خوش کر دیا۔ اُم خالد بنت خالد کا بیان ہے جب میں ایتھوپیا سے واپس آئی (مدینہ) میں ایک جوان لڑکی تھی۔ اللہ کے نبی نے مجھے ایک داغدار چادر پہنائی اللہ کے نبی نے ان نشانات کو یہ کہتے ہوئے رگڑا" سنا !سنا! (اچھا اچھا ) بخاری والیم 5 کتاب 58 نمبر 214 صفحہ 137۔

(عبدالولید محمد بن احمد ابن محمد ابن روشد) ایک مشہور فلسفی تھا۔ Averroes

جو 1226-1298ء تک رہا۔ اس نے کہا کہ غریب اور اسوقت کی مایوسی عورتوں سے آئی ان کو اس طرح رکھا جیسے گھر میں پالتو جانور یا گھر میں تسلی کے لیے لگائے گئے پودے ہوں۔ ایک بہت قابل اعتراض کردار کے علاوہ، بجائے اس کے کہ مادی اور خیالی دولت کے پیدا کرنے میں حصہ لینے کی اجازت دی جائی اور اس کے محفوظ کرنے میں۔ وائی جے ڈی بور دی ہسٹری اف فلاسفی ان اسلام 1933 صفحہ 198میں وائی آئی ایم ٹاٹ اے مسلم صفحہ 271 سے اقتباس۔ اس کے برعکس امثال 18، 14 :31 کہتی ہے۔ وہ سودگروں کے جہازوں کی مانند ہے۔ وہ اپنی خورش دور سے لے آتی ہے وہ کسی کھیت کی اببت سوچتی ہے اور اسے خرید لیتی ہے اور اپنے ہاتھوں کے نفع سے تاکستان لگاتی ہے" (18) "وہ اپنی سوداگری کو سود مند پاتی ہے رات کو اس کا چراغ نہیں بھجتا"۔

دوسرے جنسی شرعی قواعد

مرد ریشم نہیں پہن سکتے اس میں ریشمی ٹائیاں بھی شامل ہیں۔ بخاری والیم 7 کتاب 72 نمبر 720 صفحہ 482 صحیح مسلم والیم 4 کتاب 29 نمبر 6038 صفحہ 1314۔

مرد کیلے کپڑے نہیں پہن سکتا (صحیح مسلم والیم 3 کتاب 22 نمبر 5173 5178 صفحہ 1146 ابن ماجہ والیم 5 نمبر 3603 -04 صفحہ 90 -91 شماء ال ترمذی سبق 47 نمبر 4 ( 392 ) صفحہ 363

خواتین مصنوعی بالوں کی وگ نہیں پہن سکتی۔ بخاری والیم 7 نمبر 133 صفحہ 101 صحیح مسلم والیم 3 کتاب 22 نمبر 5297 5306 صفحہ 1165 -1166 موتاہ

مالک 2۔1۔51۔

خواتین چھوٹے بال نہیں رکھ سکتیں یا متبادل دانت۔ ابن ماجہ والیم 3 نمبر 1987 1989 صفحہ 196 -197.

خواتین چھوٹے بال، متبادل دانت نہیں رکھ سکتیں یا پنے چہرے کے بالوں کو ختم کریں۔ بخاری والیم 6 کتاب 60 سبق 297 نمبر 408 صفحہ 380

مسجد میں عورتوں کے لیے جگہ پیچھے ہو۔صحیح مسلم والیم 1 کتاب 4عدد 88081 صفحہ 239 ۔

لڑکیوں کی ختنہ کے متعلق۔ مسلمان شرعی ماہرین ابوداود والیم 3 حاشیہ 4257 صفحہ 1451 سے متفق نہیں ہیں۔ قرآن میں نہ اسکی تصدیق ہے اور نہ ہی اسکا منع کیا گیا ہے۔ موتاہ مالک 77۔73۔19۔2 میں اس کا نتیجہ نکالا گیا ہے کہ عورتوں کا ختنہ کیا جائے۔

جنت اور جہنم میں خواتین

عبداللہ بن قتس الاشاری کا بیان: نبی نے کہا،"ایک خیمہ(جنت میں)ایک خالی قیمتی موتی کی طرح ہے جس کی اونچائی تیس میل ہے اور خیمے کے ہر کونے پر ہر مومن کا ایک خاندان ہو گا جسے دوسرے نہیں دیکھ سکتے"۔ بخاری والیم 4 نمبر 466 صفحہ 306 صحیح مسلم والیم 4 کتاب 38 نمبر 6806 صفحہ 1481 میں یہ ساٹھ میل اونچا ہے۔ بخاری والیم 6 کتاب 60 سبق 294 نمبر 402 صفحہ 374 کہتا ہے کہ ایمانداروں کی خوبصورت خواتین بیویاں ہوں گی جو بڑے خیمے میں محصور ہوں گی۔ جبکہ مسلمان جو زمین پر نہیں پی سکتے وہ آسمان پر شراب پیں گے۔ جو عورت اپنے خاوند کی فرمانبرداری میں مرتی ہے اس سے جنت کا وعدہ کیا گیا ہے۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 1854 صفحہ 119، والیم 3 عدد 2013 صفحہ 212 (یہاں مردوں کے بارے ذکر نہیں کیا گیا جن سے اسکی بیوی راضی ٹھیں اسے سے جنت کا وعدہ ہے) مسیحی عورتوں کے لیے مردوں کی طرح وعدہ ہ ے گلتیوں 3: 28 کہتی ہے کہ مسیح میں نہ کوئی مرد ہے نہ عورت۔ بائبل، میں لوگ شادی کریں گے اور نہ ہی ان کی شادی ہو گی۔ متی 22:30۔

حوریں (جنتی کنواریاں)

جنت میں مومنوں کو منسوبی بیویاں ملیں گی جو حوریں کہلاتیں ہیں۔ بخاری والیم 4 عدد 544 صفحہ 343 اور دوسری جگہوں پر بھی ۔ایک مرد جو اپنا غصہ کنٹرول کرتا ہے اس موٹی آنکھوں والی اس کی پسند کی حوریں ملیں گی۔ ابو داود والیم 3 عدد 4759 صفحہ 1339۔ حوریں نہیں چایتیں کہ بیویاں (زمین پر) اپنے خاوندوں کو ناراض کریں۔ چونکہ حوریں بھی زمینی زندگی کے بعد خاوندوں کی بیویاں ہیں۔ مُعادھا بن جوبل کا بیان ہے کہ اللہ کے رسول نے کہا ایک عورت اپنے خاوند کو ناراض نہیں کرتی بلکہ اس کی بیوی بہت سفید ،موٹی ،اور گہری کالی آنکھوں والی کنواریوں میں سے ہے کہے گی۔ اسے ناراض نہ کرو، اللہ تجھے برباد کرے"۔ وہ (مرد ) تمہارے ساتھ ایک عارضی مہمان کے طور پر ہے۔ بہت جلد وہ تم سے جدا ہو جائے گا اور ہمارے پاس آ جائیگا۔ ابن ماجہ والیم 3 عدد 2014 صفحہ 212۔

رومی کی متھنوی کتاب 1 عدد 3450 صفحہ 192 جنت کے لوگوں کو بتاتی ہے کہ حوروں کے ہونٹوں سے بوسے چھینے جا رہے ہیں۔

جہنم میں خواتین

یہ عبداللہ بن عمر کے اختیار سے بیان ہے کہ اللہ کے رسول نے مشاہدہ کیا: او عورتوں کے گروہ ،تمہیں سخاوت دینی چاہیے اور معافی مانگنی چاہیے میں نے جہنم میں تمہاری بڑے تعداد دیکھی ہے ان میں سے ایک عقلمند عورت نے کہا اللہ کے رسول یہ کیوں ہے۔ کہ ہماری جہنم میں زیادہ تعداد ہے؟ اس پر اللہ کے رسول نے کہا تم پر لعنت ہوئی ہے اور اپنے خاوندوں کی نا شکری کرتی ہو۔ میں نے ادنیٰ سوچ کی کمی نہیں دیکھی اور نہ ہی مذہبی ناکامی بلکہ (اسی وقت) تمہارے سوا، عقلمند سے حکمت چھینی گئی۔ اس پر عورت نے بیان کیا۔ ہمارے ساتھ مذہبی اور ادنیٰ سمجھ میں کیا غلطی ہے؟ نبی نے کہا، تمہاری ادنیٰ سمجھ کی کمی (حقیقت سے اچھی طرح پہچانی جا سکتی ہے) کہ دو عورتوں کا ثبوت ایک مرد کے برابر ہے۔ یہ تمہاری ادنیٰ سمجھ کا ثبوت ہے اور تم نے کچھ راتیں (دن) نماز کے بغیر گزارے اور رمضان کے مہنے میں روزے نہ رکھے یہ مذہبی ناکامی ہے۔ صحیح مسلم والیم 1 کتاب 1 نمبر 143 صفحہ 47 48 ، بخاری والیم 2 نمبر 161 والیم 1 نمبر 301 والیم 1 نمبر 28 والیم 7 کتاب 62 نمبر 125 126 صفحہ 96 بھی دیکھیں صحیح مسلم والیم 2 کتاب 4 نمبر 1926 صفحہ 417 والیم 4 نمبر 9596 6600 صفحہ 1431 سنن نساء والیم 2 نمبر 1578 صفحہ 342۔

جہنم کے اکثر لوگوں میں عورتیں تھیں۔ وہ اپنے خاوندوں کی ناشکری اور ان کے رویے سے ناشکری تھیں۔ موتاہ مالک 2۔1۔12۔تم کیوں یہ سوچتے ہو کہ جہنم میں عورتیں زیادہ تھیں؟ کیا یہ اس لیے کہ ان کا جنت میں اتنا مقصد نہیں؟ بخاری والیم 6 عدد 402 صفحہ 374 سے زیادہ انگریزی ترجمے کا نوٹس کہتا ہے۔ "اللہ کا یہ بیان خوبصورت ہے کہ عورتیں خیموں میں محصو ہیں۔ بخاری والیم 6 کتاب 60 سبق 294 عدد 402 صفحہ 374 کہتا ہے۔ قیس کا بیان ہے کہ اللہ کے رسول نے کہا،" جنت میں 60 میل چوڑا ایک خالی قیمتی موتی سے بنا ہوا ہے ہر کونے پر بیویاں ہوں گی جو ان کو دوسرے کوناں میں نہ دیکھیں گی۔ اور مومن ون کو ملیں گے اور لطف اٹھائیں گے جنت میں وفادار عورتوں کا کیا اجر ہے جو محصور ہونا نہیں چاہتیں؟ مسیحیت میں عورتوں کو بھی ویسے ہی دیکھا جاتا ہے جیسے مردوں کو۔

قرآن کے ترجمے کی درسی

بدوی نوٹس میں صفحہ 60 پر کہتا ہے کہ وہ اس ترجمے سے اقتباس لیتا ہےتھوڑی سی ترمیم کرتے ہوئے جب کبھی بہتر بنانے کی ضرورت ہو اور وضاحت اور درسی کی۔ اس نے بہت سی تبدیلیاں کیں مگر زیادہ تر ٹھیک ہیں۔ جیسے یہ تبادلہ کرتے ہوئے "تم دونوں" "تم" کی جگہ جب مردوں اور عورتوں کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ تاہم، یہاں ایک بات ہے جو مشکوک ہے۔ بدوی صفحہ 5 پر بیان کرتا ہے "اے انسان! اپنے مالک خدا کی تعظیم کر، جس نے تم کو ایک واحد شخص سے پیدا کیا (نفس واحدہ) پیدا کیا، فطرت کی طرح، اس کا ساتھی (تعظیم) بچے دانی( جس نے تجھے پیدا کیا)؛ پس اللہ سدا تمہیں دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قرآن 4: 1 "۔ اصل میں بہادر نہیں بلکہ امتیاز کے لیے نامناسب سے شامل کیا گیا۔ "فطرت کی طرح" یہاں ایک عجیب و غریب محاورا ہے ہمارے پاس یوسف علی کا ترجمہ ہے اس کے ساتھ ساتھ تین دوسرے بھی۔ دوسرے ترجمے میں جن عالموں نے اکھٹا رکھا ہے وہ کچھ نہیں کہتا "فطرت کی طرح " یہاں یہ ہے۔جو انہوں نے کہا۔ " جس نے تجھے ایک شخص سے پیدا کیا،پیدا کیا اس میں سے، اس کا ساتھی اور ان دو منتشر (بیجوں کی طرح) سے، بے شمار مردو خواتین پیدا کیے؛ اللہ سے ڈرو، جس میں سے تم اپنے حقوق کا مطالبہ کرتے ہو۔ اور بچے دانیاں سرگرم ہوتی ہیں (جس نے تجھے پیدا کیا ) کیونکہ اللہ، ہر وقت تمہیں دیکھتا ہے"۔ (یوسف علی) "۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس جان سے اس نے اس کا ساتھی پیدا کیا" ان میں سے بے شمار مرد و خواتین بکھیرے۔ اللہ سے ڈرو، اس کے واحد نام میں، تم ایک دوسرے کے لیے حقوق کا مطالبہ کرتے ہو۔ اور رشتے قائم کرتے ہو۔ یقیناً اللہ تمہیں بہت قریب سے دیکھ رہا ہے۔ (محمد فاروق اعظم ملک) اس سے اس کا ساتھی پیدا کیا، اور ان کے جوڑے سے کئی مرد و خواتین پیدا ہوئے۔ اور خدا سے ڈرو، جس سے تم ایک دوسرے کا مطالبنہ کرتے ہو۔ اور بچے دانیاں یقیناً خدا ہر وقت تمہیں دیکھتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔" ایک واحد جان سے اس کا ساتھی پیدا کی۔ اور ان دونوں سے کئی مرد و خواتین بن گئے اور اللہ سے ڈرو، جس کے نام میں تم ایک دورسے کے لیے درخواست کرتے ہو۔ اور خاص طور پر اس سے ڈرو۔ احترام کرتے ہوئے تعلقات پیدا کرو۔ حقیقتاً اللہ تجھے دیکھتا ہے۔ اب یہاں ڈاکٹر بدوی کے نتیجے میں مسلہ نہیں بلکہ اس کے طریقے سے ہم متفق ہیں کہ اللہ نے مرد و خواتین کو اپنی فطرت کی طرح بنایا ہے۔ مگر اسکا قرآن کے بارے بڑا نقطہ یہ ہے کہ قرآن صرف ایک ہی آیت سے ثابت نہیں ہوتا۔ قدرے اس نے ایک فقرہ ایک آیت میں شامل کیا ہے۔ جو چاروں تراجم میں سے ایک میں بھی نہیں ہے۔ ڈاکٹر بدوی قرآن کے معنی تبدیل کرنے والا ایک اکیلا نہیں ہے۔ سورۃ 4: 34 میں بیویوں کو مارنے کے متعلق "مارنے" کے لیے عربی لفظ وہی ہے جو اونٹ کو مارنے کے لیے استعمال ہوتا ہے۔ جو مجرمانہ تشدد کے لیے ہوتا ہے۔ پھر بھی عبداللہ یوسف علی ترجمہ کرتا ہے جیسے "ہلکا سا مارنا" وہ کماز کم لفظ ہلکا عربی شامل کرتا ہے یہ دکھانے کے لیے کہ اس نے شامل کیا یہ عربی میں موجود نہیں۔

بائبل کے ساتھ مقابلہ

مساوات: "نہ کوئی یہودی رہا نہ یونانی، نہ کوئی غلام رہا نہ آزاد، نہ کوئہ مرد رہا نہ عورت کیونکہ تم سب مسیح یسوع میں ایک ہو"۔ گلتیوں 3: 28

وراثت: "صلافحاد کی بیٹیاں ٹھیک کہتی ہیں تو ان کو ان کے باپ کے بھائیوں کے ساتھ ضرور ہی میراث کا حصہ دینا یعنی ان کے باپ کی میراث ملے۔ اور بنی اسرائیل سے کہہ اگر کوئی شخص مر جائے اور اسکا کوئی بیٹا نہ ہو تو اس کی میراث اسکی بیٹی کو دینا"۔ گنتی 27: 7-8۔ "اور اگر بنی اسرائیل کے قبیلے میں کوئی لڑکی ہو جو میراث کی مالک ہوتو وہ اپنے باپ کے کسی قبیلے میں بیاہ کرے تاکہ ہر اسرائیلی اپنے باپ دادا کی میراثپر قائم رہے۔ یوں کسی کی میراث ایک قبیلے سے دوسرے قبیلے میں نہیں جانے پائیگی۔ کیونکہ بنی اسرائیک کے قبیلوں کو لازم ہے کہ اپنی اپنی میراث اپنے اپنے قبضے میں رکھیں"۔ گنتی 36: 8-9۔ یہ حوالے مثال دیتے ہیں کہ عورتیں جائیداد میں میراث لے سکتی ہیں جیسے ان کے بھائی لیتے ہیں۔

معاشرے میں رہنما: عورتیں نہ صرف ایک رہنما ہو سکتیں ہیں بلکہ لوگوں کی چوٹی کی رہنما بھی۔ دبورہ ایک لیڈر تھی۔ قضاۃ 4اور 5 ابواب۔

کلیسیا میں رہنما: عورتیں کلیسیا میں ایلڈر نہیں ہو سکتیں یا مردوں پر اختیار نہیں، اگرچہ وہ دیکھیں (خادمہ) ہو سکتیں 1 تیمتھیس 2: 11-15۔ وہ عورتوں اور بچوں کو سکھا سکتیں ہیں۔

تجارت میں: ایک بیوی اپنا کاروبار کر سکتی ہے اپنے خاوند سے آزادانہ امثال 31 باب

عدالتی معاملات میں: کہیں بھی عورت کی گواہی مرد سے کمتر نہیں۔ عورتیں کلیسیائی کاروائی میں خاموش رہیں۔ 1 کرنتھیوں 14: 33-38۔ نئے عہد نامے کی خواتین اپنے سر ڈھانپ کر دعا اور نبوت کرتی تھیں۔ 1 کرنتھیہوں 11: 3-16۔ خواتین اپنے خاوندون کی فرمانبرداری کریں لیکن خاوند بھی اپنی بیویوں سے محبت کریں جیسے مسیح نے کلیسیا سے محبت کی (مسیح کلیسیا کی خاطر مر گیا) افسیوں 5: 22-25۔

تنہائی / علیحدگی نہیں: خواتین کی تنہائی یا علیحدگی کا تصور بھی نہیں ہے۔ کچھ مسیح کے ساتھ ہوتیں اور پولس کے ساتھ بھی۔

خلاصہ

ڈاکٹر بدوی اپنے قارئین کو قائل کرنے کی کوشش کرر ہا ہے کہ اسلام عورتوں کے بارے روشن تعلیم دیتا ہے۔ مردوں سے کمتر نہیں، اگرچہ ان کے مختلف کردار ہیں۔ وہ ٹھیک طرحض سے ظاہر کرتا ہے کہ خواتین کی عظمت ہے، مامتا اچھی ہے وغیرہ، لیکن اس کی دلیل کئی مسلمانوں کو مائل نہیں کرے گی جو شریعت کی پیروی کرتے ہیں۔ وہ قائل نہیں ہونگے کیونکہ ڈاکٹر بدوی نے کئی مرکزی پیرے چھوڑے ہیں جو اسیروں اور غلام لڑکیوں کے حقوق کی استحصالی کو جائز قرار دیتے ہیں۔ عورتوں کے حجاب اور عورتوں کے تنہائی میں رہنا۔ اس کلے علاوہ قرآن کا ایک اقتباس شامل کرتے ہوئے، وہ بالکل غلط ہے جب اس نے کہا محمد نے کبھی"ان مطالب کو کام میں نہیں لایا" ایک عورت کو مارنے کے متعلق )صفحہ 54) محمد نے ارادتاً / قصداً/ جان بوجھ کر عائشہ کے سینے پر زور سے مارا، جس سے اس کو (عائشہ) کو درد ہوئی۔ صحیح مسلم والیم 2 کتاب 4 عدد 2127 صفحہ 462 سنن نساء والیم 2 عدد 2041 صفحہ 526۔

مضموعی طور پر مندرجہ ذیل انصاف / حق کی غلطیاں کیں۔

جیسا کوئی عورت نبی نہیں۔

عورتیں صرف چار بیویاں کرنے پر متفق ہیں۔

عدالتی قانون۔

مار پیٹ۔

نقاب ضروری ہے یہ کہنے میں خاموشی۔

خواتین کی علیحدگی/ تنہائی

متبادل سچے خدا کو ڈھونڈنا

ڈاکٹر بدوی کو عزت دیتے ہوئے کہ اس نے عورتوں کے متعلق تمام مثبت نکات اکھٹے کرنے کے ل؛یے اس نے سخت کوشش کی ہے جتنی ہو کر سکتا تھا۔ تاہم مسلمانوں کے ساتھ ساتھ غیر مسلم کئی ظاہری غلطیوں پر غور کر سکتے ہیں۔ گو یہاں آسان طریقہ ہے۔

ہو سکتا ہے، بالکل ہو سکتا ہے، کہ بارعب چیزیں، قرآن اور احادیث میں حقیقی خدا کی طرف سے نہیں ہیں اور وہ غلط ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے شریعت کی بنیاد جس پر ہے وہ قانوناً مکمل نہیں ہے۔ بجائے اس کے کہ باقی مواد کے بغیر کسی سوال و جواب کے ان اصولات پر عمل کیا جائے، لوگ حقیقی خدا کو ڈھونڈنا چاہتے ہیں، اور اسے سچے اور قابل اعتماد مکاشفے کو پائیں۔ اس مکاشفے کو حتیٰ کہ قرآن خدا کے کلام کے طور پر تسلیم کرتا ہے۔ یہ توریت اور انجیل ہیں۔ بائبل کو پڑھیے وہ مکاشفہ جو خدا نے انسان کو دیا دیکھنے کے لیے۔

حوالہ جات

 

حوالے

 

www.Answering Islam.org

 

یہ ایک بہت وسیع ویب سائت ہے جو اسلام کے بہت پہلوں پر بحث و مباحثہ کرتی ہے۔

Arbery, A.J The Koran Interpreted Macmillan publishing co 1955

Ali, Maulwishr . The Holy Quran :

علی مولوی سر

قرآن پاک : عربی متن اور انگریزی ترجمہ اسلام انٹرنیشنل پبلیکیشن لمیٹڈ 1997 ( یہ احمد مسلمانوں کی زیر سر پرستی میں چھایا کیا گیا ہے۔

نکلولس مترجم اور ایڈیٹر۔ اسلام میں خواتین ۔ قرآن اور احادیث سے منتخب کلام سینٹ مارئن پریس 2000 ( 207 صفحات) وہ صرف بخاری سے اقتباس درج کرتا ہے اور سادگی سے قبول کرتا ہے۔ بخاری ان چیزوں پر مشتمل ہے جو دوسروں میں نہیں۔

بدوی ، جمال ، پی ، ایچ ، ڈی ،اسلام میں جنسی انصاف " بنیادی اصولاں امریکن ٹرسٹ پبلیکیشن 1995

 

کارنر ، ارگن مہمت : وائسر بیجائند دی ویل : کریجل پبلیکیشن 2003 ( 218 صفجے )

 

حسن ، پروفیسر احمد سٹن ابوداؤد : انگریزی ترجمہ تشریح سمیت نوٹس ایس ایچ محمد اشرف پبلیشرز ، بک سیلرز اینڈ ایکسپورٹرز 1984 ( تن جلداں )

ہسٹری آف الطبری ، احسن عباس عتال ایڈیٹوریل بورڈ والیم 1 11 سنی پریس

 

دی ہولی قرآن : انگریزی ترجمہ معانی اتے نفسیر دا : مترجم عبداللہ یوسف علی ، ریوائزڈ اینڈ ایڈیڈ بائی دی پریزیڈینسی آف اسلامک ریسرچیز آئی ایف ٹی اے ، کال اینڈ گائڈینس کنگ فہد ہولی قرآن پرنٹنگ کمپلیکس ( کوئی تاریخ نئیں )

 

خان ، داکٹر محمد محسن ( مترجم ) صحیح البخاری کے معنوں کا ترجمہ عربی ، انگریزی ، اسلامک یونیورسٹی ، المدینہ المنورہ ، المکتب السلفیت المدینہۃ المنورہ ( کوئی تاریخ نئیں ) ( کوئی کاپی رائٹ نئیں )

ملک محمد فاروق اعظم ، انگریزی ترجمہ اتے قرآن دے معنی گائڈینس فار مین گائنڈ انسٹیوٹ آف اسلامک نالج 1997

صحیح مسلم مصنف امام مسلم انگریزی ترجمہ عبدالحمید صدیقی ، انٹرنیشنل اسلامک پبلیشنگ ہاؤس ( کوئی تاریخ نئیں )

سنن ابن ماجہ مصنف امام ابو عبداللہ محمد بن یزید ابن ماجہ چیمبرز ، گان پت روڈ ، لاہور ، پاکستان ، ورلڈ وائڈ کاپی رائٹ 1993 ذکی پبلیکشنر لاہور پاکستان

سنن نساء مترجم محمد اقبال صدیقی 1994 قاضی پبلیکیشنر۔

www.Muslim Hope .com

اگر ایک عورت نہیں جاتی کہ اس کا خاوند چار سال سے کہاں ہے اور پھر اور چار مہینے انتظار کرتی ہے (ldda) وہ شادی کرنے کے ل یے آزاد ہے۔ موتاہ مالک 62۔19۔29۔

یحیٰ کا بیان ہے ملک سے نفی کہ صفیہ بنت ابی عبید نے اسے بتایا کہ حفصہ، اُم المومنین نے عاصم ابن عبداللہ ابن سعد کو اپنی بہن فاطمہ بنت عمر بن الخطاب کے پاس بھیجا کہ وہ اسے دس بار دودھ پلائے۔ اس طرح اسے ملنے کے لیے اس کے پاس آیا۔ اس نے ایسا کیا، پس وہ اس سے ملنے آیا کرتا تھا۔ موتاہ مالک 8۔1۔30۔ تاہم، 6۔1۔30 اور 10۔1۔30، 11۔1۔30 ،14۔2۔30 کہتی ہیں۔ کہ یہ دو سال تک شمار نہ کیا گیا، سہلا بنت سہیل نے مجھ سے سالم کے بارے پوچھا جسے وہ بطور بیٹا خیال کرتے تھے۔ اور وہ اندر اسے ملنے آیا جب وہ برہنہ تھی ان کا ایک ہی کمرہ تھا۔ پس محمد نے کہا اسے اپنے دودھ سے پانچ گھونٹ پینے دے۔ اور پھر یہ درست ہو گا۔ اگرچہ محمد کی بیویوں میں سے کسی نے یہ نہیں کیا تھا۔ کیونکہ وہ خیال کرتی تھیں کہ یہ نفس پیروی ہے صرف سہلا کے لیے نہ دوسروں کے لیے۔ موتاہ مالک 12۔2۔30۔ وہ آدمی جو اپنی بیوی کو مارتا ہے رسی سے یا کوڑے سے اور مارتا ہے کہ اس کا مارنے کا مطلب نہیں ہوتا۔[ جیسے آنکھ پر یا کان پر ضرب] یا ایسا کرنے کا ارادہ نہیں تھا۔ وہ لہو کی قیمت ادا کرے۔ وہ اس اصول کے مطابق جو اس نے مارا ہے۔ تاہم، یہ کتاب پھر کہتی ہے کہ آدمی یہ ارادتاً کرتا ہے پھر رشتہ کے مسلے میں مبتلا ہو گا۔ موتاہ مالک 18۔33۔43 اس میں مباحثہ نہیں کہ عورتیں قسم نہیں کھاتیں۔ خواتین کو خون کی خاطر قسم کھانے کا کوئی حق نہیں۔ یا قتل پت معذرت کریں۔ موتاہ مالک a2۔2۔ 44۔